ٹرمپ ہار ماننے کے لئے تیار نہیں ، انتخابی دھاندلی کا لگایاالزام

ٹرمپ کے حامیوں نے ووٹوں کی گنتی میں بے ضابطگیوں کا دعوی کرتے ہوئے پنسلوینیا، جارجیا ، ایریزونا، نوادا اور مشی گن سمیت مختلف ریاستوں میں متعدد مقدمات دائر کردیئے ہیں۔

تصویر ٹویٹر گریب
تصویر ٹویٹر گریب
user

یو این آئی

امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے کہا ہے کہ اس بار کے صدارتی انتخابات میں آئین کی بڑے پیمانے پر خلاف ورزی ہوئی ہے۔

مسٹر ٹرمپ نے اتوار کے روز ٹویٹ کیا ، "جعلی نیوز میڈیا مسلسل یہ کیوں بتا رہا تھا کہ جو بائیڈن (صدارت کے لئے ڈیموکریٹک امیدوار) جیت رہے ہیں۔ اس نے ہمارے حق میں نہیں دکھایا ۔2020 کے انتخابات میں ہمارے آئین کی بڑے پیمانے پر خلاف ورزی ہوئی ہے۔ ہماری متعدد ریاستوں میں بڑی تعداد میں ووٹنگ آبزرورکو ووٹنگ ہال سے باہر کردیا گیا اور ڈیموکریٹک ممبران نے لاکھوں بیلٹ پیپرکو تبدیل کردیا۔

اس سے قبل اتوار کے روز مسٹر ٹرمپ نے ٹویٹر پر کہا تھا کہ مستقبل قریب میں ایسے مزید مقدمات درج کیے جاسکتے ہیں جو نومبر میں ہوئے صدارتی انتخابات کی غیرآئینی کو ثابت کریں گے۔ انہوں نے کہا تھا ، "ملک بھر میں بہت سے مقدمے دائر ہو رہے ہیں۔ ہم نے یہ مقدمات نہیں بلکہ ان لوگوں نے دائر کیے ہیں جن کے ساتھ بہت زیادتی ہوئی ہے۔ بہت سارے بڑے مقدمات جلد دائرکیے جائیں گے جو 2020 کے انتخابات کو غیرآئینی اور انتخابی نتائج کو تبدیل کرنے کے لئے کیے گئے کام کو ظاہر کریں گے۔

مسٹر ٹرمپ کے حامیوں نے ووٹوں کی گنتی میں بے ضابطگیوں کا دعوی کرتے ہوئے پنسلوینیا، جارجیا ، ایریزونا، نوادا اور مشی گن سمیت مختلف ریاستوں میں متعدد مقدمات دائر کردیئے ہیں۔

امریکی میڈیا نے دعوی کیا ہے کہ 3 نومبر کو ہونے والے صدارتی انتخابات میں ڈیموکریٹک امیدوار جو بائیڈن نے کامیابی حاصل کی تھی۔ مسٹر بائیڈن بھی اپنی کامیابی کا اعلان کرتے ہوئے قوم سے خطاب بھی کرچکے ہیں۔ ابھی تک انتخابی نتائج مکمل طور پر واضح نہیں کیے گئے ہیں اور مسٹر ٹرمپ کا دعویٰ ہے کہ انہوں نے جیت حاصل کی ہے لیکن دھوکہ دہی سے انہیں ہرایا گیا ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


next