جمعہ کی دوپہر نیوزی لینڈ کے سپرمارکیٹ میں دہشت گردانہ حملہ، دہشت گرد ہلاک

نیوزی لینڈ کی وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن نے جمعہ کو اس بات کی تصدیق کی کہ آکلینڈ کے نیو لن سپر مارکیٹ میں پیش آیا پرتشدد حملہ دراصل ایک سری لنکائی شہری کے ذریعہ کیا گیا دہشت گردانہ حملہ تھا۔

نیوزی لینڈ کی وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن
نیوزی لینڈ کی وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن
user

قومی آوازبیورو

نیوزی لینڈ کی وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن نے جمعہ کے روز اس بات کی تصدیق کر دی کہ آکلینڈ کے نیو لن سپر مارکیٹ میں پیش آیا پرتشدد حملہ ایک سری لنکائی شہری کے ذریعہ کیا گیا ’دہشت گردانہ حملہ‘ تھا۔ اس دہشت گرد کو پولیس نے گولی مار کر ہلاک کر دیا۔ خبر رساں ایجنسی سنہوا کی ایک رپورٹ کے مطابق ایمبولنس سروس سینٹ جانس کے ایک ترجمان نے کہا کہ دوپہر تقریباً 2.40 بجے ہوئے حملے میں کم از کم 6 لوگ زخمی ہو گئے جن میں تین کی حالت سنگین ہے۔

وزیر اعظم آرڈرن نے ویلنگٹن میں ایک پریس کانفرنس کے دوران کہا کہ ایک تشدد پسند شخص نے آکلینڈ میں نیو لن کاؤنٹ ڈاؤن میں بے قصور نیوزی لینڈ باشندوں پر دہشت گردانہ حملہ کیا۔ انھوں نے مزید کہا کہ یہ حملہ تشدد آمیز تھا، یہ بے وقوفی والا قدم تھا اور مجھے افسوس ہے کہ ایسا ہوا۔ وزیر اعظم کا کہنا ہے کہ پولیس نے حملے کے تقریباً ایک منٹ کے اندر جرائم پیشہ کو گولی مار دی۔


جیسنڈا آرڈرن کے مطابق حملہ آور ایک سری لنکائی شہری تھا جو 2011 میں نیوزی لینڈ آیا تھا اور 2016 سے نیوزی لینڈ پولیس کے ذریعہ اس کی اسلامک اسٹیٹ سے متاثر نظریہ کے لیے سخت نگرانی کی جا رہی تھی۔ حالانکہ یہ ابھی تک نامعلوم ہے کہ یہ شخص نیوزی لینڈ کا شہری ہے یا نہیں۔

نیوزی لینڈ کے پولیس کمشنر اینڈریو کوسٹر نے بھی اس تعلق سے ایک پریس کانفرنس کیا ہے جس میں تصدیق کی ہے کہ حملے کے پیچھے موجود شخص اپنے نظریات کو لے کر سخت نگرانی میں تھا۔ حملے سے قبل اس شخص نے گلین ایڈن سے مغربی آکلینڈ کے لن مال میں کاؤنٹ ڈاؤن تک کا سفر کیا تھا۔ جس پر نگرانی ٹیموں کے ذریعہ باریکی سے نظر رکھی جا رہی تھی۔ وہ کاؤنٹ ڈاؤن سپر مارکیٹ میں داخل ہوا جہاں اسے ایک چاقو ملا۔ کوسٹر کے مطابق نگرانی ٹیم اس کے کافی قریب تھی، اور جب ہنگامہ شروع ہوا تو انھوں نے کارروائی کی۔ کاسٹر نے کہا کہ جب وہ شخص چاقو لے کر ان کے پاس پہنچا تو اس کا گولی مار کر قتل کر دیا گیا۔


مسلح پولیس نے سیکورٹی کے تحت آس پاس کی سڑکوں کو بند کر دیا ہے۔ جمعہ کا حملہ نیوزی لینڈ کے سب سب خراب دہش گردانہ حملے کے دو سال بعد پیش آیا ہے، جب 2019 میں کرائسٹ چرچ میں دو مساجد میں ایک سفید فام بندوق بردار نے 51 مسلم نمازیوں کا قتل کر دیا تھا۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔