امریکہ 'مسلسل جنگ' سے 'مسلسل سفارت کاری' کی طرف گامزن: بائیڈن

امریکی صدر جو بائیڈن نے کہا کہ امریکہ نے افغانستان میں 20 سال سے جاری تنازع کا خاتمہ کر دیا ہے اور اب وہ مسلسل امن کی جانب گامزن ہے۔

تصویر آئی اے این ایس
تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

امریکی صدر جو بائیڈن نے منگل کے روز موسمیاتی تبدیلی اور کووڈ۔ 19 وبائی مرض سے لڑنے پر توجہ مرکوز کرنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ امریکہ اب "مسلسل جنگ" سے "مسلسل سفارتکاری" کی طرف بڑھ رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے افغانستان میں 20 سال سے جاری تنازع کا خاتمہ کر دیا ہے اور اب ہم مسلسل جنگ کے اس دور کو ختم کر کے ’’ مسلسل سفارتکاری ‘‘ کے نئے دور کا آغاز کر رہے ہیں۔ مسٹر بائیڈن نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 76 ویں اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ یہ عشرہ "ہماری دنیا کی فیصلہ کن دہائی" ہے۔


ماضی کی جنگوں کی جگہ نگاہیں مرکز پر

مسٹر بائیڈن نے کہا ، "ماضی کی جنگوں کو جاری رکھنے کے بجائے ، ہم اپنی آنکھیں ان مقاصد پر مرکوز کر رہے ہیں اور اپنے وسائل کو ان چیلنجوں کے لیے وقف کر رہے ہیں جو ہمارے اجتماعی مستقبل کی کلید ہیں۔ اس وبا کے زمانے میں ، بڑے چیلنجز ہیں جیسے آب و ہوا کے بحران سے نمٹنا ، تیزی سے بدلتی ہوئی عالمی صورتحال کا انتظام کرنا ، دنیا کے ممالک کے کرداروں کو نئی شکل دینا ، دنیا اور تجارت جیسے مسائل ، سائبر اور ابھرتی ہوئی ٹیکنالوجیز ، اور خطرے سے نمٹنا دہشت گردی ہمارے سامنے ہے۔

ان کا یہ ریمارکس افغانستان سے امریکی افواج کے انخلا اور طالبان کے ملک پر قبضے کے حوالے سے آیا ہے اور اس وقت امریکہ کو افغانستان سے انخلا کے بارے میں سخت تنقید کا سامنا ہے۔
ان کا خطاب بھی ایسے وقت میں آیا ہے جب دنیا کووڈ۔ 19 وبائی امراض کے اثرات سے دوچار ہے ، اور آب و ہوا کی تبدیلی ایک بڑے خطرے کے طور پر ابھر رہی ہے اور ممالک اس کے اثرات سے دوچار ہیں۔


یہ عشرہ فیصلہ کن ہے

امریکی صدر نے کہا کہ یہ عشرہ ہمارے لیے ایک فیصلح کن عشرہ ہے یہ ہمارے لیے ایک واضح اور فوری متبادل ہے اور یہ دہائی ہمارے مستقبل کا بہت حد تک تعین کرے گی۔ ہمیں لوگوں کی زندگیاں بچانے کے لیے مل کر کام کرنا ہے ، کورونا سے لڑنا ہے اور اس طرح کی کئی وبائی امراض سے لڑنے کے لیے تیار رہنا ہے۔

امریکہ دوسری سرد جنگ نہیں چاہتا

چین کا نام لیے بغیر انہوں نے کہا کہ امریکہ اب دوسری سرد جنگ نہیں چاہتا۔ انہوں نے کہا کہ ہم نئی سرد جنگ یا ایسی صورتحال نہیں چاہتے جہاں پوری دنیا دو سخت کیمپوں میں تقسیم ہو۔ ان کا یہ بیان بحیرہ جنوبی چین میں چین کی جارحانہ سرگرمیوں اور ہند چین سرحد پر کشیدگی کے تناظر میں آیا ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔