چین ایغور مسلمانوں کی نس بندی کرنا بند کرے: امریکہ

مائک پومپیو نے کہا کہ ہم چینی کمیونسٹ پارٹی سے ان مہمات کو بند کرنے کی اپیل کرتے ہیں۔ ساتھ ہی دنیا کے سبھی ممالک سے گزارش ہے کہ وہ امریکہ کے ساتھ مل کر اس غیر انسانی کارروائی کو روکنے کا مطالبہ کریں۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

واشنگٹن: امریکہ نے چین سے ایغور مسلمانوں کی نس بند کرنے والی مہم کو فوری طور پر روکنے کے لئے کہا ہے۔ امریکہ کے وزیر خارجہ مائک پومپیو نے جرمنی کے ماہر تعلیم ایڈرین جینز کے نئے مطالعہ کا حوالہ دیتے ہوئے منگل کے روز ایک بیان جاری کرکے کہا کہ ’’چین سے دنیا کو پریشان کرنے والی کچھ ایسی رپورٹیں سامنے آرہی ہیں جس سے پتہ چلتا ہے کہ چینی کمیونسٹ پارٹی شن ژیانگ صوبے میں خاندانی منصوبہ بندی کے نام پر طاقت کے استعمال سے ایغور مسلمانوں اور دیگر اقلیتی برادریوں کے لوگوں کی نس بندی کررہی ہے۔ اس کے علاوہ اقلیتی خواتین کو اسقاط حمل کرانے کے لئے مجبورکیا جارہا ہے۔‘‘

مائک پومپیو نے مزید کہا کہ ’’ہم چینی کمیونسٹ پارٹی سے فوری طور پر ان مہمات کو بند کرنے کی اپیل کرتے ہیں۔ ساتھ ہی دنیا کے سبھی ممالک سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ امریکہ کے ساتھ مل کر اس غیر انسانی کارروائی کو روکنے کا مطالبہ کریں‘‘۔ دراصل، جرمنی کے ماہر تعلیم ایڈین جینز نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ چین کی کمیونسٹ پارٹی ویگر مسلمانوں کو بچے پیدا کرنے سے روک رہی ہے اور ان کے قتل عام کے لئے پالیسی بنا رہی ہے۔