سونیا نے ڈنر کے ذریعہ مودی کو پیغام دیا

عشائیہ میں موجود راہل گاندھی اور سونیا گاندھی

سونیا گاندھی نے حزب اختلاف کی سیاسی پارٹیوں کو ڈنرمیں مدعو کرکے حکمراں بی جے پی کو واضح پیغام دے دیا ہے کہ مستقبل میں قومی سیاست میں کیا ہونے والا ہے۔ 

سونیا گاندھی نے اپنے عشائیہ سے جہاں حزب اختلاف کے اتحاد کا پیغام دینے کی کامیاب کوشش کی وہیں انہوں نے اس بات کا بھی خیال رکھا کہ مستقبل میں کون لوگ سیاست میں کیا کردار ادا کر سکتے ہیں اور یہی وجہ ہے کہ جہاں ان کی ٹیبل پر بہار کے دلت رہنما جیتن رام مانجھی بیٹھے نظر آئے تو وہیں راہل گاندھی کے ساتھ جہاں ایک طرف این سی پی سربراہ شرد پوار بیٹھے نظر آئے تو دوسری جانب بی ایس پی کے ستیش مشرا دکھائی دئے۔

سیاست میں ان چیزوں کی بہت اہمیت ہوتی ہے کہ کون کس طرح داخل ہوا ، کس طرح نکلا ، کون کس کے ساتھ زیادہ گفتگو کرتا نظرآیا اور کس نے کس کے ساتھ کھانا کھایا۔ یہ باتیں کہیں نہ کہیں اس بات کا اشارہ دے دیتی ہیں کہ مستقبل میں ہوا کس رخ بہے گی ۔ راہل گاندھی ان رہنماؤں کے ساتھ بیٹھے نظر آئے جو مستقبل میں کانگریس کی بڑی ضرورت بھی ہو سکتے ہیں اور کانگریس کی پریشانی کا سبب بھی بن سکتے ہیں اس لئے ان رہنماؤں کا کانگریس صدر کے ساتھ ایک ٹیبل پر نظر آنا یہ واضح اشارہ کرتاہے کہ ان رہنماؤں کو کانگریس صدر کے ساتھ چلنے میں کوئی پریشانی نہیں ہوگی۔

 
سونیا گاندھی کے عشائیہ میں موجود حزب اختلاف کے رہنما
تصویر یو این آئی
تصویر یو این آئی
تصویر یو این آئی
تصویر یو این آئی
تصویر یو این آئی
تصویر یو این آئی
تصویر یو این آئی
تصویر یو این آئی

این سی پی اور بی ایس پی کے بعد ممتا بینرجی کی پارٹی ترنمول کانگریس بہت اہمیت رکھتی ہے ۔ ممتا بینرجی خود تو اس عشائیہ میں شریک نہیں ہویئں لیکن ان کی پارٹی کی نمائندگی سودیپ بندو پادھیائے کر رہے تھے اور وہ کانگریس کے بڑے رہنما احمد پٹیل کی ٹیبل پر ساتھ بیٹھے نظر آئے ۔ واضح رہے یہ اس لئے بہت اہم ہے کیونکہ تری پورہ انتخابات کے کے بعد ممتا بینرجی نے غیر کانگریسی اور غیر بی جے پی محاذ بنانے کی پہل کرتے ہوئے تلنگانہ کے وزیر اعلی کے سی آر راؤ کے ساتھ بات کی تھی ۔

ذرائع کے مطابق سونیا گاندھی نے خود ڈنر کا مینو تیار کیا تھا اس میں اس بات کا خاص خیال رکھا گیا تھا کہ کیونکہ مہمانوں کا تعلق مختلف ریاستوں سے ہے اس لئے ویج اور نان ویج سوپ کے بعد دال، چنے چھولے ، پنیر کی سبزی ، مٹن ، چکن، اور کیرالہ و بنگال کے مہمانوں کے لئے مچھلی کا بھی اہتمام کیا گیا تھا۔ میٹھے میں ربڑی، جلیبی، گلاب جامن اور آئس کریم بھی تھے ۔سونیا گاندھی نے اس ڈنر کے ذریعہ مودی اور بی جے پی کو واضح پیغام دیا ہے کہ مستقبل میں سیاست کے گلیاروں میں کیا ہونے والا ہے۔

سب سے زیادہ مقبول