بریگزٹ: غیرملکیوں کے خلاف نسل پرستانہ خط، ’صرف انگریزی بولو‘

انگلینڈ کے شہر نوروِچ سے غیر ملکیوں سے نفرت کے پہلے واقعےمیں ایک پندرہ منزلہ عمارت کے مکینوں سے کہا گیا، ’’انگریزی کے علاوہ کوئی دوسری زبان بولنے والے کسی فرد کو برداشت نہیں کیا جائے گا۔‘‘

بریگزٹ: غیرملکیوں کے خلاف نسل پرستانہ خط، ’صرف انگریزی بولو‘
بریگزٹ: غیرملکیوں کے خلاف نسل پرستانہ خط، ’صرف انگریزی بولو‘
user

ڈی. ڈبلیو

برطانیہ نے یورپی یونین سے اکتیس جنوری اور یکم فروری کی درمیانی شب علیحدگی اختیار کر لی تھی۔ یہ واقعہ بریگزٹ کی رات نوروِچ میں پیش آیا۔ اس واقعے میں نامعلوم افراد نے ایک پندرہ منزلہ رہائشی عمارت کی ہر منزل پر ہر فلیٹ کے دروازے کے باہر ایک خط چسپاں کر دیا گیا تھا۔ ایک صفحے پر مشتمل اس کھلے خط کو 'ہیپی بریگزٹ ڈے‘ یا 'بریگزٹ کا دن مبارک‘ کا عنوان دیا گیا تھا۔

اس نسل پرستانہ اور غیر ملکیوں سے نفرت کے عکاس خط کے اس طرح عام لوگوں کے گھروں کے باہر جسپاں کیے جانے کے واقعے کی برطانوی سوشل میڈیا پر شدید مذمت کی جا رہی ہے۔ پولیس کے مطابق یہ واضح طور پر نسل پرستانہ منافرت کا ایک واقعہ ہے، جس کی چھان بین کی جا رہی ہے۔

اس خط میں اس عمارت کے مکینوں سے کہا گیا، ''ہم ان فلیٹوں میں کسی بھی ایسے شخص کے مقیم رہنے کو برداشت نہیں کریں گے، جو انگریزی کے علاوہ کوئی دوسری زبان بولتا ہو۔ جو کوئی بھی اس بات پر عمل کرنے کا خواہش مند نہ ہو، اسے واپس اپنے وطن لوٹ جانا چاہیے۔‘‘

اس خط کی سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی تصویروں کے مطابق اس میں برطانیہ کے یورپی یونین سے اخراج کا حوالہ دیتے ہوئے یہ بھی لکھا گیا ہے، ''اب ہم واپس اپنے ہی وطن میں آ گئے ہیں۔‘‘ مشرقی انگلینڈ کے اس شہر کی انتظامیہ نے اس خط کی اس طرح تقسیم اور اس میں لکھی گئی نسل پرستانہ باتوں پر شدید غصے کا اظہار کیا ہے۔

نوروِچ کی شہری انتظامیہ کی طرف سے ٹوئٹر پر ایک پیغام میں کہا گیا، ''پولیس اس واقعے کی چھان بین کر رہی ہے۔ اس امر میں کوئی شک نہیں کہ نوروِچ کی انتظامیہ کسی کی طرف سے بھی اس طرح کے رویے کو قطعاﹰ برداشت نہیں کرے گی۔‘‘ شہر کی بلدیاتی کونسل کے ایک رکن نے مقامی اخبار 'ایسٹرن ڈیلی پریس‘ کو بتایا، ''نوروِچ کو اپنی تاریخ پر فخر ہے اور اس بات پر بھی کہ یہ لوگوں کا خیرمقدم کرنے والا شہر ہے۔ جس کسی نے بھی یہ کام کیا ہے، وہ نفرت پھیلانے کے جرم کا مرتکب ہوا ہے۔‘‘

اس بارے میں مقامی پولیس کی ایک ترجمان نے کہا، ''یہ واضح طور پر ایک نسل پرستانہ جرم ہے اور برطانوی معاشرے میں نفرت، نسل پرستی اور عدم برداشت کے لیے کوئی جگہ نہیں ہے۔‘‘

برطانوی میڈیا کے مطابق یہ خط جمعہ 31 جنوری اور ہفتہ یکم فروری کی درمیانی رات جس کثیر المنزلہ عمارت میں تمام اپارٹمنٹس کے باہر چسپاں کیا گیا، اس میں زیادہ تر ایسے افراد رہائش پذیر ہیں، جن کی عمریں 55 برس یا اس سے زیادہ ہیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔