اتر پردیش پھر شرمسار، عصمت دری کے بعد 8 سالہ بچی کا قتل

وحشی نے زیر تعمیر مکان میں بچی کے ساتھ عصمت دری کی اور پھر گلا دبا کر اس کا قتل کردیا۔ شہنائی اور میوزک کی آواز میں بچی کی چیخیں گونجتی رہیں۔

ایٹہ: پورے ملک میں غصہ ہے لیکن خواتین اور بچیوں کے خلاف ہونے والے مظالم کا سلسلہ رکنے کا نام نہیں لے رہا۔ ایسا محسوس ہو رہا ہے جیسے ملک میں حکومت نام کی کوئی چیز نہیں ہے۔ اب اترپردیش کے ایٹہ میں شادی کی تقریب میں اپنے رشتہ داروں کے ساتھ شرکت کرنے آئی ایک 8 سالہ معصوم بچی کا عصمت دری کے بعد قتل کرنے کا معاملہ روشنی میں آیا ہے۔

سینئر پولس سپرنٹنڈنٹ اکھلیش کمار چورسیا نے آج یہاں بتایا کہ شادی میں شرکت کی غرض سے اپنے خاندان کے ساتھ 8 سال کی معصوم بچی ا ٓئی تھی۔ یہ واقعہ رات تقریباً ڈیڑھ بجے اس وقت پیش آیا جب شادی کی تقریب میں سب لوگ مصروف تھے ۔

میوزک اور شہنائی کی آوازیں گونج رہی تھیں اس کا فائدہ اٹھا کر سونو نامی شخص نے موقع پاکر بچی کو اٹھاکر گلی میں لے گیا اور وہاں زیر تعمیر ایک مکان کے ایک کمرے میں لے جاکر بچی کی عصمت دری کی اور پھر گلا دبا کر اس کا قتل کردیا۔ شہنائی اور میوزک کی آواز میں بچی کی چیخیں کسی کو سنائی نہیں دیں۔

انہوں نے بتایا کہ بہت دیر تک جب بچی لاپتہ رہی تو اس کی تلاش شروع کی گئی اور واقعہ کی اطلاع پولس کو دی گئی۔ کافی دیر تک تلاش کرنے کے بعد بچی کی لاش اس مکان سے ملی جہاں یہ دل دلہانے والا واقعہ پیش آیا ۔

ملزم سونو کو گرفتا ر کرلیا گیا ہے اور لاش پوسٹ مارٹم کے لئے بھیج دیی گئی ہے۔

سب سے زیادہ مقبول