جہان آباد معاملہ: اعتماد ٹوٹنے کی کہانی، متاثرہ کی زبانی

متاثرہ کے ساتھ سہیلی کا بوائے فرینڈ نازیبا حرکتیں کر رہا تھا یہ منظر گاؤں کے رہائشی لڑکے نے دیکھ لیا۔ اس نے اس لڑکے کو فون کردیا جو متاثرہ کے ساتھ یکطرفہ محبت اور ساتھ میں پڑھا ئی کرتا ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

نیاز عالم

پٹنہ: جہان آباد میں نابالغ کے ساتھ عصمت دری کی کوشش کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہے، اس ویڈیو کے معاملے میں پولس کو بڑی کامیابی حاصل ہوئی ہے۔ زونل آئی جی نیر حسنین خان کی ہدایات پر تشکیل شدہ خصوصی تحقیقاتی ٹیم (ایس آئی ٹی ) متاثرہ تک پہنچنے میں کامیاب ہو گئی ہے۔ ملزمین اور متاثرہ جہان آباد کے ایک ہی گاؤں بھرتھوا کے رہائشی ہیں۔ جہان آباد کے ایس پی آشیش کمار نے متاثرہ کے مل جانے کی تصدیق کی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ ’’لڑکی نابالغ ہے اور معاملے میں دیگر دفعات کے ساتھ پوکسو (پریوینشن آف چلڈرین فرام سیکسول آفینسز)ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کیا گیا ہے ، لہذا لڑکی کی شناخت اور اس کا بیان عوامی نہیں کیا جا سکتا۔‘‘ انہوں نے مزید کہا کہ ’’ایک نابالغ سمیت چار ملزمان گرفتار کئے جا چکے ہیں جبکہ دیگر چار ملزمان کی گرفتاری کے لئے چھاپے ماری کی جا رہی ہے ، جلد ہی تمام ملزمان حراست میں ہوں گے ۔‘‘

یہ بھی پڑھیں: بہار میں انسانیت شرمسار، نابالغ لڑکی حیوانیت کی شکار

دوسری طرف پولس ذرائع پر یقین کریں تو نابالغ متاثرہ نے واقعہ کے سلسلے میں جو کچھ بتایا وہ خوفناک ہونے کے ساتھ حیران کرنے والا بھی ہے۔ واردات کے بعد سے متاثرہ کافی سہمی ہوئی ہے۔ اس نے اس واقعے کے تعلق سے اپنے خاندان کے افراد کو بھی کچھ نہیں بتایا تھا۔ ایس آئی ٹی کے ذریعہ ہی لڑکی کے خاندان والوں کو دل دہلا دینے والے اس واقعہ کی اطلاع ملی۔

ویڈیو تین دن کے بعد وائرل ہوا تھا

پولس کا اندازہ ہے کہ واقعہ اسی دن یعنی 28 اپریل کا ہے جس دن ویڈیو وائرل ہوا ۔ لیکن متاثرہ کے مطابق واقعہ ویڈیو کے وائرل ہونے سے تین روز قبل یعنی 25 اپریل کو پیش آیا تھا۔ متاثرہ اس واردات سے ایک دن قبل یعنی 24 اپریل کو اپنی ایک قریبی سہیلی کے ساتھ اسٹوڈیو میں فوٹو کھنچوانے گئی تھی۔ اس وقت سہیلی کا 24 سالہ بوائے فرینڈ بھی وہاں مو جود تھا۔ واردات والے روزمتاثرہ گھر سے کوچنگ گئی تھی ۔ صبح 10:30 بجے جب کوچنگ ختم ہوئی تو سہیلی کے بوائے فرینڈ نے متاثرہ کو موٹر سائیکل سے گھر پہنچانے کی بات کہی۔ چونکہ سہیلی کا بوائے فرینڈ تھا اس لئے متاثرہ نے اس پر بھروسہ کیا اور بائیک سے گھر جانے کو تیار ہو گئی ، لیکن لڑکے کی منشا کچھ اور ہی تھی، اس نے سیدھے راستے گھرلے جانے کی بجائے موٹر سائیکل کا رخ دوسرے گاؤں کی جانب موڑ دیا اور آبادی سے کافی دور ایک ویران جگہ پر اس نے بائیک روک دی ۔ متاثرہ نے ایس آئی ٹی کو بتایا کہ سہیلی کے بوائے فرینڈ نے اسے دھوکہ دیا اور اس کے ساتھ غلط حرکت کرنے کی کوشش کی۔

جس وقت متاثرہ کے ساتھ سہیلی کا بوائے فرینڈ غلط حرکتیں کر رہا تھا وہ منظر قریب کے گاؤں کے رہائشی لڑکے نے دیکھ لیا۔ اس نے ایسے لڑکے کو فون کر کے بلا لیا جو متاثرہ کے ساتھ یکطرفہ محبت اور ساتھ میں پڑھا ئی کرتا ہے۔ اطلاع ملتے ہی وہ لڑکا اپنے 5-6 ساتھیوں کے ساتھ موقع پر پہنچا اور متاثرہ کو اپنے قبضے میں لے کر نازیبا حرکتیں کرنے لگا ۔ لڑکی چیختی چلاتی رہی، بھیا بھیا کہہ کر رحم کی بھیک مانگتی رہی ، لیکن ان لڑکوں نے اس کی ایک نہ سنی اور اس کی عزت کو تار تار کرتے رہے ، متاثرہ کے کپڑے پھاڑ ڈالے اور ساتھ ہی پوری واردات کی ویڈیو بناتے رہے۔ اکیلے ہونے کی وجہ سے سہیلی کا بوائے فرینڈ اسے بچانے میں ناکام رہا۔ طویل وقت تک نازیبا حرکتوں اور عصمت دری کی کوشش کرنے کے بعد لڑکوں نے متاثرہ کو چھوڑ دیا۔ سہیلی کے بوائے فرینڈ نے اپنے بھائی کو فون کر کے کپڑے منگوائے جو کہ متاثرہ نے پہنے ،جس کے بعد سہیلی کے بوائے فرینڈ نے متاثرہ کو اس کے گھر پہنچایا۔

واضح رہے کہ 30 اپریل یعنی پیر کی صبح زونل آئی جی نیر حسنین خان نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے اس معاملے کے سلسلہ میں ایک نابالغ سمیت 4 لڑکوں کو گرفتار کرنے کی بات کہی تھی۔ اب اس معاملے میں ایس آئی ٹی کو کل 7 لڑکوں کی تلاش ہے۔ ایس پی جہان آباد آشیش کمار کے مطابق ’’دیگر ملزمان کی شناخت ہو گئی ہے اور جلد ہی سبھی کو گرفتار کر لیا جائے گا۔‘‘ زونل آئی جی کا کہنا ہےکہ اس معاملہ میں تیزی کے ساتھ قانون کے مطابق سخت کارروائی کی جائے گی۔

next