حزب اللہ کی سرنگوں سے خوفزدہ اسرائیل نے کارروائی کا اعلان کیا

اسرائیلی فوج نے آج منگل کو حزب اللہ کی ایسی کئی مبینہ سرنگوں کا سراغ لگانے کا دعوٰی کیا ہے، جو یہ تنظیم مبینہ طور پر اسرائیلی سرزمین میں در اندازی کے لیے استعمال کرنا چاہتی تھی۔

By ڈی. ڈبلیو

اسرائیلی فوج کے ترجمان جوناتھن کونریکس نے بتایا ہے کہ حملے کے لیے استعمال ہونے والی یہ سرنگیں ابھی تک فعال نہیں ہو پائی تھیں۔ تاہم انہوں نے ان کی تعداد کے بارے میں کچھ نہیں بتایا اور نہ ہی یہ تفصیلات بتائیں کہ انہیں کس طرح سے تباہ کیا جائے گا۔

کونریکس نے یہ تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ سرنگوں کے خاتمے کی کارروائی اسرائیلی سرزمین پر ہی ہو گی۔ ساتھ ہی انہوں نے اس خدشے کا بھی اظہار کیا کہ اس کے بعد شیعہ تنظیم حزب اللہ کے ساتھ کشیدگی میں بھی اضافہ ہو سکتا ہے۔ اسرائیل اور حزب اللہ 2006ء میں ایک جنگ بھی لڑ چکے ہیں۔

اسرائیلی فوج کے ترجمان نے صحافیوں سے باتیں کرتے ہوئے کہا، ’’ہم نے آپریشن ناردن شیلڈ شروع کیا ہے تاکہ سرحد پار حملوں کے لیے بنائی جانی والی ان سرنگوں کو بے نقاب کیا جائے، جنہیں دہشت گرد تنظیم حزب اللہ نے لبنان سے اسرائیل میں داخل ہونے کے لیے کھودا ہے۔‘‘

عسکریت پسند فلسطینی تنظیم حماس پر بھی الزام عائد کیا جاتا ہے کہ اس نے بھی غزہ پٹی میں ایسی ہی سرنگیں کھودی ہوئی ہیں۔

ان سرنگوں کے خاتمے کے لیے یہ اعلان ایک ایسے وقت پر سامنے آیا ہے، جب اسرائیلی وزیر اعظم بینجمن نیتن یاہو نے امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو سے پیر تین دسمبر کی رات دیر گئے ملاقات کی تھی۔