ہمیں جنگ میں شامل نہ کیا جائے، عراقی شیعہ رہنما

عراقی شیعہ رہنماؤں نے پپر کے روز ان کے ملک کو امریکا اور ایران کی ممکنہ جنگ میں زبردستی شامل کرنے کے خلاف خبردار کیا ہے۔

ہمیں جنگ میں شامل نہ کیا جائے، عراقی شیعہ رہنما
ہمیں جنگ میں شامل نہ کیا جائے، عراقی شیعہ رہنما

ڈی. ڈبلیو

عراق کے معروف شیعہ مبلغ مقتدی الصدر نے کہا ہے کہ وہ اس بات کے خلاف ہیں کہ ایران اور امریکا کے درمیان کسی جنگ کو ہوا دی جائے۔ ان کے بقول یہ صورتحال عراق کو ایک جنگی میدان میں تبدیل کر دے گی، ’’ہمیں امن اور تعمیر چاہیے اور کوئی بھی فریق جو عراق کو جنگ کا میدان بنائے گا، وہ عراقی عوام کا دشمن ہو گا۔‘‘

عصائب اہل الحق نامی شیعہ تنظیم کے سربراہ قیس الخز علی نے خبردار کرتے ہوئے کہا، ’’ایران اور امریکا کے مابین کوئی بھی جنگ عراق کو نقصان پہنچائے گی۔ عراقی سیاست، اقتصادیات اور سلامتی پر اثر پڑے گا۔‘‘ ایک اور شیعہ رہنما ہادی العامری نے زور دیتے ہوئے کہا کہ اگر جنگ ہوئی تو وہ سب کو جلا کر رکھ دے گی۔

ابھی اتوار کے دن ایک راکٹ بغداد کے انتہائی محفوظ تصور کیے جانے والے علاقے ’گرین زون‘ میں آ کر گرا۔ یہاں پر امریکی سفارت خانہ واقع ہے۔ تاہم اس واقعے میں کوئی بھی جانی نقصان نہیں ہوا۔

راکٹ گرنے کے واقعے کے فوری بعد امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ٹویٹ کی،’’اگر ایران لڑنا چاہتا ہے، تو وہ ایران کا باقاعدہ خاتمہ ہو گا۔ امریکا کو دوبارہ نہیں دھمکانہ۔‘‘جواب میں ایرانی وزیرخارجہ جواد ظریف نے امریکی صدر کی ٹویٹ کو نسل پرستی سے تعبیر کیا۔

امریکا اور ایران کے مابین کشیدگی آج کل اپنے عروج پر ہے۔ امریکا نے مشرق وسطی میں اپنی عسکری موجودگی میں اضافہ کر دیا ہے جبکہ ساتھ ہی سعودی عرب نے اسی ماہ عرب ممالک کا ایک ہنگامی اجلاس بھی طلب کر لیا ہے۔