میں اداس ہوں لیکن کوئی دوسرا راستہ نہیں، شہزادہ ہیری

شہزادہ ہیری نے کہا ہے کہ ان کی اور ان کی اہلیہ کی پر سکون زندگی کے لیے شاہی خاندان سے تقریباً تمام تعلقات ختم کرنے کے علاوہ ان کے پاس اور کوئی دوسرا راستہ نہیں تھا۔

میں اداس ہوں لیکن کوئی دوسرا راستہ نہیں، شہزادہ ہیری
میں اداس ہوں لیکن کوئی دوسرا راستہ نہیں، شہزادہ ہیری
user

ڈی. ڈبلیو

شاہی خاندان سے علیحدگی کے اعلان کے بعد یہ پہلا موقع ہے کہ شہزادہ ہیری نے اس موضوع پر عوامی سطح پر کوئی تبصرہ کیا ہے۔ ہیری کا کہنا تھا کہ انہوں نے یہ فیصلہ جلد بازی میں نہیں کیا۔ ساتھ ہی انہوں نے اپنی دادی ملکہ الزبتھ دوئم اور کنبے کے دیگر افراد کی اس بات پر تعریف کی کہ انہوں نے شہزادہ ہیری اور ان کی اہلیہ میگھن مارکل کا گزشتہ چند مہینوں میں بہت ساتھ دیا۔
شہزادہ ہیری نے کہا کہ انہوں نے یہ فیصلہ اپنے اعتماد کے بل بوتے پر لیا ہے اور انہیں امید ہے کہ اس طرح وہ اور ان کی فیملی مزید پر امن طریقے سے زندگی گزار پائے گی۔

ان خیالات کا اظہار شہزادہ ہیری نے ایک چیرٹی پروگرام کے دوران کیا۔ چیرٹی پروگرام میں تقریر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ان کا اور ان کی اہلیہ کا ارادہ ہے کہ وہ اپنی زندگی لوگوں کی خدمت کرتے ہوئے گزاریں اور برطانیہ کے لیے ان کی حمایت اٹل ہے۔

انہوں نے مزید کہا ،’’ہم دور نہیں جا رہے اور یقینی طور پر ہم آپ سے دور نہیں ہو رہے۔ میری توقع تھی کہ میں عوام کے پیسے کے بغیر ملکہ برطانیہ، دولت مشترکہ اور اپنی فوجی خدمات جاری رکھوں لیکن بد قسمتی سے یہ ممکن نہ ہو سکا۔‘‘

شہزادہ ہیری اور ان کی اہلیہ میگھن اپنا زیادہ تر وقت کینیڈا میں گزارنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ اس برس موسم بہار کی آمد کے ساتھ ہی وہ اپنے شاہی خطابات کا استعمال بند کر دیں گے اور سرکاری طور پر جیسے ہی خدمات کا سلسلہ رکے گا اس کے ساتھ ہی عوامی فنڈز تک ان کی رسائی ختم ہو جائے گی۔

شہزادہ ہیری نے ان تاثرات کا اظہار افریقہ میں ایچ آئی وی سے متاثرہ نوجوانوں کی امداد کرنے والی ایک فلاحی تنظیم سینٹیبل کی حمایت کے لیے منعقدہ عشا یے کے موقع پر کیا۔ انہوں نے اپنی تقریر کا آغاز ان ابتدائیہ کلمات سے کیا،’’اس تقریب میں بہت سے ایسے لوگ موجود ہیں، جنہوں نے مجھے بڑا ہوتے دیکھا ہے اور میں چاہتا ہوں کہ وہ مجھ سے سچ سنیں ایک شہزادے یا ڈیوک کی حثیت سے نہیں بلکہ ہیری کی حیثیت سے میری بات سنیں۔‘‘

ہیری کا کہنا تھا کہ انہوں نے یہ فیصلہ اپنے تئیں اپنی بیگم میگھن اور بیٹے آرچی کے لیے بھی کیا ہے۔ ان کی زوجہ ان کے لیے وہی رہیں گی جن کی محبت میں وہ گرفتار ہوئے تھے۔ تقریر کے اختتام پر انہوں نے اپنے کنبے کے ساتھ اپنے تعلقات پر بات کرتے ہوئے کہا، ’’میں ہمیشہ اپنی کمانڈر ان چیف یعنی اپنی دادی کا احترام و عزت کرتا رہوں گا۔ میں ان کا اور اپنے دیگر اہل خانہ کا بہت ہی شکر گزار ہوں، جنہوں نے گزشتہ مہینوں کے دوران میرا اور میگھن کے ساتھ بھرپور ساتھ دیا۔