آخری سانس تک آئین کی حفاظت کے لئے لڑیں گے: سونیا گاندھی

سونیا گاندھی نے کہا کہ کسان جو ہمارا ان داتا ہے آج اس کی حالت خراب ہے اور وہ خود کشی کرنے پر مجبور ہیں ہم اس کو سہولیات دینے سے تو رہے، اس کی پیداوار کی واجب قیمت بھی نہیں دے پا رہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

کانگریس کی عظیم الشان ’بھارت بچاؤ ریلی‘ سے خطاب کرتے ہوئے کانگریس کی عبوری صدر سونیا گاندھی نے عوام سے کہا کہ ’’آج ملک کو بچانے کے لئے ان کو سامنے آنا ہوگا۔ ملک کے حالات بہت خراب ہیں اور ہمیں گھر سے باہر نکلنے کی ضرورت ہے۔ اگر ملک کو بچانا ہے تو سخت جدوجہد کرنی ہوگی۔‘‘

مودی حکومت کی ہر پالیسی کا پوسٹ مارٹم کرتے ہوئے سونیا گاندھی نے سوال کیا کہ آج بچے کام کی تلاش کر رہے ہیں، ان کی لگی لگائی نوکریاں جا رہی ہیں کیا ایسے وقت میں ہم اپنے نوجوانوں کے مستقبل کے لئے لڑنے کے لئے تیار ہیں یا نہیں ؟

سونیا گاندھی نے بھارت بچاؤ ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کسان جو ہمارا ان داتا ہے آج اس کی حالت خراب ہے اور وہ خود کشی کرنے پر مجبور ہیں ہم اس کو سہولیات دینے سے تو رہے، اس کی پیداوار کی واجب قیمت بھی نہیں دے پا رہے۔ کیا ہم اپنے کسانوں کی بہتر زندگی کے لئے لڑنے کے لئے تیار ہیں یا نہیں ؟ سونیا گاندھی نے مزدوروں کے مسائل اٹھاتے ہوئے کہا کہ ہمارے مزدور اتنی محنت کرتے ہیں لیکن ان کو دو وقت کی روٹی نہیں ملتی۔ کیا ہم ان کی زندگی کے بدلاؤ کے لئے لڑنے کے لئے تیار ہیں یا نہیں؟انہوں نے کہا کہ ہمارے ملک کے چھوٹے تاجر جنہوں نے بینکوں سے قرضے لئے تھے اور وہ ادا نہیں کر پائے وہ اپنے پورے خاندان کے ساتھ خودکشی کر رہے ہیں، کیا ہم ان کے لئے لڑنے کے لئے تیار ہیں یا نہیں؟

سونیا گاندھی نے اس موقع پر خواتین کے مسائل پر بات کرتے ہوئے کہا کہ ’’میری پیاری بہوں کو کتنی محنت کرنی پڑتی ہے،وہ اپنا پیٹ کاٹ کر گھر چلاتی ہیں اور وہ اتنی پریشان ہیں کہ ان کی نیند حرام ہو گئی ہے۔ اس کے اوپر ان پر مظالم ہو رہے ہیں۔ میں آپ سے پوچھتی ہوں کیا ہم اپنی ماں بہنوں کے لئے لڑنے کے لئے تیار ہیں یا نہیں؟‘‘

سونیا گاندھی نے اس موقع پر وزیر اعظم نریندر مودی کے نعرے سب کا ساتھ سب کا وکاس پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ ملک کی معیشت تباہ ہو رہی ہے، کیا اس کی جانچ ہونی چاہئے یا نہیں؟ انہوں نے پوچھا جس نوٹ بندی کو کالا دھن ختم کرنے کے لئے کیا گیا تھا کیا اس سے کالا دھن ختم ہوا یا نہیں، کیا اس کی جانچ ہونی چاہئے یا نہیں؟ انہوں نے پوچھا کیا اس کی جانچ نہیں ہونی چاہئے کہ غلط طریقہ سے جی ایس ٹی لاگو کیا گیا ؟سونیا نے کہا کہ جس طرح آر بی آئی سے پیسہ لیا گیا کیا اس کی جانچ نہیں ہونی چائے؟انہوں نے سوال کیا کہ نو رتن کمپنیوں کو بیچا جا رہا ہے کیا اس کی جانچ نہیں ہونی چاہئے؟

مودی حکومت کو شہریت ترمیمی بل پر آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے سونیا گاندھی نے کہا کہ ’’آج کا ماحول ایسا ہو گیا ہے کہ جب مرضی آئے کوئی بھی قانون بنا دیا جائے اور کوئی بھی ہٹا دیا جائے اور ہر روز آئین کی دھجیاں اڑائی جا رہی ہیں۔‘‘ انہوں نے مزید کہا کہ حکومت پر شہریت ترمیمی بل لانے کا جنون سوار تھا اور یہ بل ملک کی روح کو تباہ کرنے والا بل ہے۔

سونیا گاندھی نے اپنے خطاب میں کہا کہ وہ یہ بات دعوے کے ساتھ کہہ سکتی ہیں کہ ملک ایسے قوانین کے ساتھ نہیں ہے اور کانگریس ہر اس کے ساتھ کھڑی ہے جس کے ساتھ نا انصافی ہوگی۔انہوں نے کہا کہ بی جے پی حکومت کا مقصد صر ف ایسی سیاست کرنا ہے جس میں لوگ لڑیں اور وہ اقتدار میں رہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں آئین کی حفاظت کے لئے کوئی بھی قربانی دینے کے لئے تیار رہنا چاہئے اور آخری سانس تک ہم ملک کی جمہوریت اور آئین کی حفاظت کریں گے۔

Published: 14 Dec 2019, 2:31 PM