قبرستان کا اثر ہٹانے کےلئے کورٹ میں قرآن خوانی کرانے پر تنازعہ! ڈی ایم کا جانچ کا حکم

رکن اسمبلی رمیش دواکر کا کہنا ہے کہ کورٹ ایسا مقام ہوتا ہے جہاں تمام مذاہب کے لوگوں کو انصاف ملتا ہے، اس طرح سے عبادت کرایا جانا افسوس ناک ہے، قصورواروں کے خلاف کارروائی کی جانی چاہئے

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا

قومی آوازبیورو

اوریا: اوریا ضلع کی ایس ڈی ایم (سب ڈویزنل مجسٹریٹ) کی عدالت میں پیر کے روز قرآن کی تلاوت کرائی گئی جس کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو گئی۔ سرکاری عمارت میں ہونے والی اس مذہبی تقریب پر کافی لوگوں نے اعتراض ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ عدالت کسی ایک مذہب سے وابستہ نہیں ہے لہذا وہاں کسی خاص مذہب کی عبادت کرنا مناسب نہیں ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ عدالت کے سامنے قبرستان موجود ہے اور قرآن خوانی کرانے کا مقصد وہاں سے پڑنے والے منفی اثرات کو دور کرنا تھا! قرآن خوانی کے اس مقصد کو جان کر غیر مسلم ہی نہیں مسلم طبقہ نے بھی اعتراض ظاہر کرتے ہوئے اسے غلط بتایا ہے۔

اطلاعات کے مطابق اوریا کے اجیت مل میں واقع تحصیل کمپلیکس میں ایس ڈی ایم کورٹ میں پیر کے روز فرنیچر ڈالنے سے پہلے قرآان خوانی کرائی گئی، جس کی ویڈیو وائرل ہونے کے بعد انتظامی افسران فوری حرکت میں آ گئے اور ضلع مجسٹریٹ ابھیشیک سنگھ نے اس معاملہ کو ایس ڈی ایم کے سپرد کرتے ہوئے جانچ کی ہدایت دی ہے۔

واضح رہے کہ اجیت مل تحصیل کی نئی تعمیر شدہ عمارت میں ایڈیشنل چیف سکریٹری مہیش گپتا کے حکم پر 10 دسمبر سے کام شروع کیا جا رہا ہے۔ اس کے لئے پرانی تحصیل سے سامان منتقل کرنے کا کام جاری ہے۔ پیر کی صبح ، مسلم علماء کو نئی تعمیر شدہ عمارت میں تلاوت کلام کے لئے ایس ڈی ایم عدالت میں مدعو کیا گیا تھا، جس کی ویڈیو سہ پہر کو سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی تھی۔ ویڈیو وائرل ہوتے ہی انتظامی عہدیداروں میں ہلچل مچ گئی۔

اصولوں کے مطابق کسی بھی سرکاری عمارت یا احاطے میں کوئی مذہبی رسوم ادا نہیں کیا جا سکتا۔ اے ڈی ایم ایم پی سنگھ نے بتایا کہ تفتیش موقع پر کی گئی ہے ، شام تک رپورٹ ڈی ایم کو پیش کی جائے گی۔ ایس ڈی ایم راشد علی خان کا کہنا ہے کہ نذیر نے قرآن مجید پڑھا ہے۔ نذیر لائق احمد کا پتہ نہیں چل سکا اور اس کا موبائل فون بند ہے۔

ایس ڈی ایم اجیت مل راشد علی خان نے کہا، ’’میری ڈیوٹی 28 نومبر سے کانپور پولس بھرتی میں لگی ہے۔ مجھے نہیں معلوم کہ نئی تعمیر شدہ عمارت میں کیا ہو رہا ہے۔ اب معلوم ہوا ہے کہ ناظر لئیق احمد نے قرآن کی تلاوت کرائی ہے، اس معاملے میں محکمانہ کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔

ادھر، اس معاملے میں ایس ڈی ایم ریکھا ایس چوہان نے کہا ’’نئی تعمیر شدہ تحصیل کے سامنے قبرستان ہے۔ ایسی افواہ ہے کہ جو بھی قبرستان کے قریب رہتا ہے وہ بیمار ہوجاتا ہے۔ لہذا، یہ اطلاع ملی ہے کہ کسی ملازم نے بغیر اجازت قرآن کی تلاوت کرائی ہے۔ معاملہ میں قصورواروں کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔‘‘

Published: 3 Dec 2019, 4:11 PM