وارانسی: گنگا کی آبی سطح بڑھنے سے سیلاب جیسے حالات، گلیوں میں جلائی جا رہیں لاشیں

ہریش چندر شمشان گھاٹ کی حالت تو انتہائی مایوس کن ہے، یہاں لاشوں کو نذرِ آتش کرنے کے لیے کسی طرح کا مچان یا پلیٹ فارم بھی حکومت کی طرف سے نہیں بنوایا گیا ہے۔

علامتی فائل تصویر، آئی اے این ایس
علامتی فائل تصویر، آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

وزیر اعظم نریندر مودی کے پارلیمانی حلقہ وارانسی میں اِن دنوں سیلاب جیسے حالات پیدا ہو گئے ہیں۔ گنگا ندی کی آبی سطح کافی بڑھ گئی ہے جس سے لوگوں کو کئی طرح کے مسائل کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ شمشان گھاٹ کا بڑا حصہ بھی پانی میں ڈوب گیا ہے جس سے لاشوں کی آخری رسومات ادا کرنے میں دقتیں پیش آ رہی ہیں۔ مہا شمشان منی کرنیکا گھاٹ پر پہنچنے والی لاشوں کی آخری رسومات کے لیے بھی لوگوں کو گھنٹوں انتظار کرنا پڑ رہا ہے۔ ایسے میں مہاشمشان منی کرنیکا گھاٹ پر بنے اونچے مچان ہی لاشوں کو سپردِ آتش کرنے کی واحد جگہ رہ گئی ہے۔ کاشی کے دوسرے شمشان ہریش چندر گھاٹ پر تو لوگوں کو گلیوں میں آخری رسومات ادا کرنی پڑ رہی ہے۔ اس سے نہ صرف مہلوکین کے اہل خانہ کو، بلکہ لاشوں کو سپردِ آتش کرنے والے ڈوم سماج کے لوگوں کو بھی زبردست دقتوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

اس سال آئے سیلاب کی وجہ سے گنگا کی آبی سطح بڑھنے کے بعد گھٹنی شروع ہو گئی تھی، لیکن گزشتہ تین چار دنوں سے آبی سطح میں ایک بار پھر اضافہ دیکھنے کو مل رہا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ساحلی علاقوں میں رہائش پذیر لوگوں کو بھی دقتوں کا سامنا ہے۔ منی کرنیکا گھاٹ پر آنے والوں کو صرف اس لیے تقریباً دو سے ڈھائی گھنٹے انتظار کرنا پڑ رہا ہے کیونکہ سیلاب کے پانی کے سبب گھاٹ پر آخری رسومات کی جگہ کم ہو گئی ہے۔


منی کرنیکا گھاٹ پر لاشوں کو سپردِ آتش کرنے کا کام کرنے والے ڈوم کنبہ کے ایک رکن امرجیت چودھری کہتے ہیں کہ سیلاب کی وجہ سے ہمیشہ ہی حالات خراب ہو جاتے ہیں۔ گھاٹوں پر پانی آ جانے کے بعد صرف اونچے بنے مچان پر تیار 10 چولھوں (جسے جنگلا بھی کہا جاتا ہے) پر آخری رسومات ادا کی جاتی ہیں۔ انتظامیہ کو چاہیے کہ اس سلسلے میں کوئی بہتر قدم اٹھائے اور انتظام و انصرام دیکھے۔

ہریش چندر شمشان گھاٹ کی حالت تو انتہائی مایوس کن ہے۔ یہاں کسی طرح کا مچان یا پلیٹ فارم بھی حکومت کی طرف سے نہیں بنوایا گیا ہے۔ اس وجہ سے سیلاب کے حالات میں لاشوں کو جلانے کا عمل بھی گھاٹ کنارے نہیں ہو پاتا، اور یہ عمل گلیوں میں انجام پاتا ہے۔ ڈوم راجہ کنبہ کے رکن پون چودھری کا کہنا ہے کہ گلیوں میں لاشیں جلائے جانے سے ان کی فیملی کو بہت پریشانی ہوتی ہے، کیونکہ گھر والے ان گلیوں میں ہی رہتے ہیں۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔