جب ماہرین کو لگا کہ کورونا پرقابو پالیا گیا ہےتب ویکسین ایکسپورٹ کی تھی: پونا والا

ہندوستان جیسے بڑے ملک میں ویکسینیشن مہم دو سے تین ماہ میں مکمل نہیں کی جاسکتی ہے اور اس میں کافی وقت لگے گا۔

کوویشیلڈ ٹیکہ لگواتے ہوئے، فائل تصویر، ٓئی اے این ایس
کوویشیلڈ ٹیکہ لگواتے ہوئے، فائل تصویر، ٓئی اے این ایس
user

یو این آئی

سیرم انسٹی ٹیوٹ آف انڈیا (سی آئی آئی) کے سی ای او ، ادار پونا والا نے واضح کیا ہے کہ انہوں نے ملک کے عوام کے مفادات کو نظرانداز کرکے کبھی بھی ویکسین کی برآمد نہیں کی اور ملک میں جاری ویکسینیشن مہم ان کا ادارہ ہرممکن مدد فراہم کرنے کے لئے پرعزم ہے۔

مسٹر ادار پونا والا کا بیان ایک ایسے وقت میں آیا ہے جب مرکزی حکومت کے ویکسین برآمد کے فیصلے پر ملک میں پرزور بحث چھڑی ہوئی ہے اور سی آئی آئی سمیت دیگر ویکسین تیار کرنے والی کمپنیوں کے کردار پر بھی سوال اٹھ رہے ہیں۔


سی آئی آئی کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں مسٹرا دار پونا والا کے حوالے سے واضح کیا گیا کہ رواں سال جنوری میں ان کے پاس ویکسین خاصی مقدار میں موجود تھی اور اس وقت کورونا کے معاملات بہت کم تھے اور ملک میں ویکسینیشن مہم شروع ہوچکی تھی۔ اس صورتحال میں ، متعدد صحت ماہرین کا نظریہ تھا کہ ہندوستان نے کورونا کو بہت مؤثر طریقے سے کنٹرول کیا ہے۔اسی وقت دنیا کے متعدد ممالک کو کورونا کے بحران کا سامنا کر نا پڑ رہاتھا اور انہیں مدد کی بہت ضرورت تھی۔ اس وقت ، مرکز نے اپنی طرف سے ان ممالک کو ہر ممکن مدد فراہم کرائی اور اس سلسلہ میں یہ ٹیکے ان ممالک کو بھیجے گئے جہاں ان کی اشد ضرورت تھی۔

انہوں نے کہا کہ لوگوں کو یہ سمجھنے کی ضرورت ہے کہ ہندوستان جیسے بڑے ملک میں ویکسینیشن مہم دو سے تین ماہ میں مکمل نہیں کی جاسکتی ہے اور اس میں کافی وقت لگے گا۔ سی آئی آئی مرکزی حکومت کے ساتھ مل کر اپنی طرف سےانتھک کوشش کررہی ہے تاکہ انسانیت کی بہتر خدمت کی جاسکے اور اس جذبے کو مستقبل میں بھی جاری رکھا جائے گا۔ ہم سبھی کے لئے ایک ساتھ مل کر کام کرنے اور اس وبا کو شکست دینے کا وقت ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔