یو پی: مزدوروں پر کیمیکل چھڑکاؤ معاملہ نے پکڑا طول، ضلع مجسٹریٹ نے دیا جانچ کا حکم

ضلع مجسٹریٹ نے بتایا کہ بسوں کو سینیٹائز کرنے کے دوران کافی حساسیت کی وجہ سے کچھ لوگوں پرسوڈیم ہائیپوکلارائڈ مرکب پانی کا اسپرے کردیا گیا۔ اس معاملے میں جانچ کا حکم صادر کر دیا گیا ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

اترپردیش کے ضلع بریلی میں سیٹیلائٹ بس اڈے پر زمین پر بٹھا کر مزدوروں پر سوڈیم ہائیپوکلورا سائڈ مرکب پانی سے نہلانے کے معاملے کا سخت نوٹس لیتے ہوئے ضلع انتظامیہ نے جانچ کے احکامات صادر کر دئیے ہیں۔ ضلع مجسٹریٹ نتیش کمار نے پیر کے روز بریلی میں بتایا کہ اتوار کی دیر شام بریلی سے گزر رہے لوگوں کا علاج بریلی کے چیف میڈیکل افسر ونیت کمار شکلا کی ہدایت پر کیا جارہا تھا۔ اسی دوران بریلی نگر نگم اور فائر بریگیڈ کی ٹیم کو بسوں کو سینیٹائز کرنے کے بھی ہدایات دئیے گئے تھے۔

ضلع مجسٹریٹ نے بتایا کہ بسوں کو سینیٹائز کرنے کے دوران کافی حساسیت کی وجہ سے کچھ لوگوں پرسوڈیم ہائیپوکلارائڈ مرکب پانی کا اسپرے کردیا گیا۔اس معاملے میں جانچ کے ہدایات دئیے گئےہیں اور یہ معلوم کرنے کے لیے کہا گیاہے کہ مسافروں پر کیمکل کا اسپرے کس کے کہنے پر اور کیوں ڈالا گیا۔

بتایا جاتا ہے کہ جن لوگوں پر کیمیکل کا چھڑکاؤ کیا گیا، ان میں سے کچھ کی طبیعت ناساز بھی ہو گئی ہے اور ان کا علاج کیا جا رہا ہے۔ ضلع مجسٹریٹ نے مزدوروں پر غلط طریقے سے کیمیکل چھڑکاؤ کے بارے میں ٹوئٹ کر کے بتایا کہ "اس ویڈیو کی جانچ کی گئی۔ متاثرہ لوگوں کا سی ایم او کی ہدایت میں علاج ہو رہا ہے۔ کیمیکل چھڑکاؤ کرنے والوں کے خلاف ضروری کارروائی کی ہدایت دے دی گئی ہے۔"

قابل ذکر ہے کہ اتوار کو بریلی میں بس اڈے پر پولیس کی موجودگی میں بسوں کے انتظار میں کھڑے سینکڑوں افراد پر کیمیکل مرکب پانی کا اسپرے کیا گیا تھا۔جس کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہوگئی۔اسپرے کی وجہ سے لوگوں کی آنکھیں لال ہوگئیں اور بچے روتے بلکتے ہوئے نظر آ رہے تھے۔

(یو این آئی ان پٹ کے ساتھ)