کنجھاولا معاملہ میں مرکزی وزارت داخلہ کی سخت کارروائی، ڈیوٹی پر تعینات سبھی پولیس اہلکار معطل

اسپیشل کمشنر شالنی سنگھ کی صدارت والی جانچ کمیٹی کی طرف سے ایک رپورٹ سونپے جانے کے بعد مرکزی وزارت داخلہ نے یہ کارروائی کی ہے۔

<div class="paragraphs"><p>متاثرہ لڑکی کے حق میں انصاف کے لئے احتجاج کرتے مقامی افراد / یو این آئی</p></div>

متاثرہ لڑکی کے حق میں انصاف کے لئے احتجاج کرتے مقامی افراد / یو این آئی

user

قومی آوازبیورو

دہلی کے کنجھاولا قتل معاملہ میں مرکزی وزارت داخلہ نے سخت قدم اٹھاتے ہوئے دہلی پولیس کے تین پی سی آر وین اور دو پکیٹ میں ڈیوٹی پر تعینات سبھی اہلکاروں کو معطل کرنے کا حکم صادر کر دیا ہے۔ یہ جانکاری اعلیٰ افسران کی طرف سے دی گئی ہے۔ بتایا گیا ہے کہ لاپروائی کے سبب ان تمام پولیس اہلکاروں کے خلاف کارروائی کی گئی ہے۔ افسران کا کہنا ہے کہ وزارت داخلہ نے دہلی پولیس کو پی سی آر وین، جانچ چوکی اور دیگر افسران کو اپنی ڈیوٹی نبھانے میں ناکام رہنے کے لیے وجہ بتاؤ نوٹس جاری کرنے کی بھی ہدایت دی ہے۔ اسپیشل کمشنر شالنی سنگھ کی صدارت والی جانچ کمیٹی کی طرف سے ایک رپورٹ سونپے جانے کے بعد یہ کارروائی کی گئی۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق اُس رات ڈیوٹی پر تعینات پولیس اہلکاروں کے خلاف ڈسپلنری کارروائی بھی کی جائے گی۔ وزارت داخلہ نے دہلی پولیس کو کنجھاولا قتل معاملہ میں جلد از جلد چارج شیٹ داخل کرنے کی ہدایت دی گئی ہے تاکہ قصورواروں کو سزا مل سکے۔ وزارت داخلہ نے کہا کہ راجدھانی میں نظامِ قانون کی حالت میں بہتری کے لیے بھی کارروائی کی جانی چاہیے تاکہ لوگ، خصوصاً خواتین اور بچے بے خوف ماحول میں رہ سکیں۔


بتایا جاتا ہے کہ کنجھاولا معاملہ میں گہرائی کے ساتھ جانچ کی جائے گی کہ کیا بہتر کوآرڈنیشن کے لیے پی سی آر وین یونٹس کو ضلع پولیس کے ساتھ جوڑ دیا جائے۔ پی سی آر وین کو کچھ سال پہلے ضلع پولیس سے الگ کر دیا گیا تھا۔ باہری دہلی میں ان علاقوں کی پولیس کی طرف سے مناسب جانچ کی جائے گی جہاں سی سی ٹی وی کیمرے کم ہیں یا نہیں ہیں اور جن علاقوں میں اسٹریٹ لائٹ نہیں ہے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔