عبداللہ اعظم کے جعلی برتھ سرٹیفکیٹ کیس میں ٹرائل جاری رہے گا، ہائی کورٹ کا مداخلت سے انکار

اعظم خان کی جانب سے کہا گیا کہ مقدمے کا مرکزی گواہ محمد شفیق مدعی آکاش سکسینہ کے قریب ہے، اس لیے محمد شفیق ان کے خلاف گواہی دے رہے ہیں

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

لکھنؤ: ہائی کورٹ نے سماجوادی پارٹی کے قدآور لیڈر اور سابق کابینہ وزیر محمد اعظم خان کے بیٹے عبداللہ اعظم کے فرضی برتھ سرٹیفکیٹ معاملے میں اعظم خان، بیٹے عبداللہ اور اہلیہ تزئین فاطمہ کے خلاف مقدمے کی سماعت میں مداخلت کرنے سے انکار کر دیا ہے۔ عدالت نے کہا کہ جب تک درخواست پر فیصلہ نہیں کیا جاتا، ٹرائل کورٹ سے کیس کا فیصلہ نہیں آئے گا۔ ہائی کورٹ نے مقدمے کی سماعت پر روک لگانے اور کچھ نئے شواہد پیش کرنے کی اجازت دینے کی اعظم خان کی درخواست پر فیصلہ محفوظ رکھا ہے۔

اعظم خان سمیت تین لوگوں کے خلاف مقدمہ کی سماعت رام پور کی خصوصی ایم پی-ایم ایل اے عدالت میں چل رہی ہے۔ درخواست میں مطالبہ ہکیا گیا ہے کہ انہیں ایم پی-ایم ایل اے کورٹ میں جاری مقدمے میں ثبوت کے طور پر پین ڈرائیو اور ویڈیو کلپ داخل کرنے کی اجازت دی جائے۔ اعظم خان کی جانب سے کہا گیا کہ مقدمے کا مرکزی گواہ محمد شفیق مدعی آکاش سکسینہ کے قریب ہے، اس لیے محمد شفیق ان کے خلاف گواہی دے رہا ہے۔ اس حقیقت کو ثابت کرنے کے لیے ہائی کورٹ سے ایک پین ڈرائیو اور ویڈیو کلپ کو بطور ثبوت پیش کرنے کی اجازت دینے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔


درخواست کی مخالفت کرتے ہوئے ایڈیشنل ایڈوکیٹ جنرل پی سی سریواستو اور ایڈیشنل گورنمنٹ کونسل جے کے اپادھیائے نے کہا کہ شفیق نے اپنے بیان میں پین ڈرائیو کو قبول کیا ہے۔ ایسی صورت حال میں پین ڈرائیو کو بطور ثبوت شامل کرنے کی اجازت لینے کا مقصد صرف ٹرائل میں تاخیر ہے، اس لیے اس کی اجازت نہیں دی جانی چاہیے۔ عدالت نے دونوں فریقین کے دلائل سننے کے بعد اس معاملے میں اپنا فیصلہ محفوظ رکھا ہے۔ اس کے ساتھ ہی ایم پی-ایم ایل اے کورٹ رام پور کو اس کیس کی سماعت جاری رکھنے کی ہدایت دی گئی ہے۔

لیکن اس درخواست پر فیصلہ آنے تک مقدمے کا فیصلہ نہیں سنایا جائے گا۔ الزام ہے کہ عبداللہ اعظم نے دو برتھ سرٹیفکیٹ بنوائے ہیں اور دونوں میں تاریخ پیدائش مختلف ہے۔ انہوں نے غلط برتھ سرٹیفکیٹ کی بنیاد پر اسمبلی الیکشن بھی لڑا تھا۔ آکاش سکسینہ نے ان کے خلاف مقدمہ درج کرایا ہے۔ تحقیقات میں عبداللہ اعظم کا پیدائشی سرٹیفکیٹ جعلی پایا گیا جس کی وجہ سے ان کی اسمبلی رکنیت منسوخ کر دی گئی۔ اعظم خان اور دیگر کی جانب سے ہائی کورٹ میں درخواست دائر کی گئی ہے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;