اچانک الٹی سمت میں چلنے لگی ٹرین، الجھن میں پڑے مسافر وجہ جان کر ہوئے خوش!

ٹرین تقریباً ڈھائی کلو میٹر پیچھے دوڑنے کے بعد جب ٹاٹا نگر پہنچی تو ریلوے اسٹیشن پر میڈیکل ٹیم نے حاملہ خاتون اور نوزائیدہ بچے کو بحفاظت اتارا اور ابتدائی جانچ کے بعد انھیں اسپتال میں داخل کرایا گیا۔

ریل، تصویر آئی اے این ایس
ریل، تصویر آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

ٹاٹا نگر سے بھونیشور کے لیے منگل کی رات روانہ ہوئی آنند وہار-بھونیشور سمپرک کرانتی ایکسپریس اچانک الٹی سمت میں چلنے لگی۔ اس سے مسافر الجھن میں پڑ گئے کہ آخر یہ کیا ماجرا ہے۔ سبھی ایک دوسرے کو سوالیہ نظروں سے دیکھنے لگے۔ پھر جب انھیں بتایا گیا کہ ایک خاتون درد زہ سے پریشان ہے اور ٹرین کو پیچھے کی طرف لے جایا جا رہا ہے جہاں ڈاکٹروں کی ایک ٹیم انتظار کر رہی ہے، تو مسافر خوش ہوگئے کہ ریلوے نے ایک اچھا انتظام کیا ہے۔

میڈیا میں آ رہی خبروں کے مطابق جب ایک خاتون کو درد زہ ہوا تو اس کے بعد ٹرین کو منزل سے الٹی سمت میں چلانا پڑا۔ ٹرین تقریباً ڈھائی کلو میٹر پیچھے لوٹنے کے بعد ٹاٹا نگر ریلوے اسٹیشن پہنچی اور پھر میڈیکل ٹیم نے حاملہ خاتون اور نوزائیدہ بچے کو بحفاظت اتارا اور ابتدائی جانچ کے بعد انھیں خاص محل واقع صدر اسپتال میں داخل کرایا گیا۔ ماں اور بچے دونوں صحت مند ہیں۔ چلتی ٹرین میں بچے کو جنم دینے والی خاتون کا نام رانو داس بتایا گیا ہے۔


ریلوے کے ایک افسر نے بتایا کہ خاتون ٹرین کے کوچ نمبر 5 میں سوار تھی۔ انھیں اڈیشہ کے جلیشور میں اترنا تھا۔ ٹرین دیر شام ٹاٹا نگر اسٹیشن سے کھل کر آگے بڑھی ہی تھی کہ چلتی ٹرین میں خاتون کو درد زہ ہونے اور پھر بچی کو جنم دینے کی اطلاع ٹاٹا نگر اسٹیشن کو دی گئی۔ ٹرین تقریباً ڈھائی کلو میٹر آگے بڑھ گئی تھی۔

افسر نے بتایا کہ ٹرین کو واپس ٹاٹا نگر اسٹیشن بلانے کا فیصلہ لیا گیا، کیونکہ ٹرین کی اگلی منزل ہجلی پہنچنے میں کم از کم دو گھنٹے کا وقت لگتا اور اس درمیان ان دونوں کی زندگی کو خطرہ لاحق ہو سکتا تھا۔ بہر حال، ٹاٹا نگر ریلوے اسٹیشن کے افسران نے مقامی ریلوے اسپتال کو اطلاع دے کر میڈیکل ٹیم کو اسٹیشن بلایا گیا۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔