شمسی توانائی پلانٹس کی معتبریت اس کی کامیابی کا اہم عنصر: ماہرین

شمسی توانائی سے بجلی گھر کی کامیابی کا انحصار زیادہ تر بجلی الیکٹرانکس کنورٹرز اور دیگر اجزاء کی شمولیت پر ہوگا

سوشل میڈیا
سوشل میڈیا
user

یو این آئی

شمسی توانائی پلانٹس کی اہمیت پر اپنے پہلے کلیدی خطاب میں پروفیسر فریڈ بلیابجرگ نے زور دیا کہ شمسی توانائی سے بجلی گھر کی کامیابی کا انحصار زیادہ تر بجلی الیکٹرانکس کنورٹرز اور دیگر اجزاء کی شمولیت پر ہوگا۔انہوں نے پاور الیکٹرانکس، کنٹرول اینڈ میشن سے متعلق ایک دو روزہ بین الاقوامی کانفرنس یہ بات کہی۔

ڈاکٹر احتشام الحق کانفرنس کے کنوینر اور آرگنائزنگ چیئر نے مندوبین کو جامعہ ملیہ اسلامیہ کی تاریخ سے آگاہ کیا وہ ایم ایچ آر ڈی اسپارک پروجیکٹ کے پرنسپل انوسٹی گیٹر (پی آئی) بھی ہیں۔ آسٹریلیا کے وکٹوریہ یونیورسٹی کے پروفیسر اختر کلام، پروفیسر فریڈ بلیابجرگ - البرگ یونیورسٹی، ڈنمارک، پروفیسرہوئی وانگ - البرگ یونیورسٹی، ڈنمارک نے کلیدی خطبات پیش کئے۔پروفیسر ظہیر الدین کانفرنس کے تکنیکل چیئر نے کانفرنس کی رپورٹ پیش کی۔

مہمان خصوصی پروفیسر اگروال نے مندوبین اور طلباء کو معاشرے کے مسائل حل کرنے کے لئے تخلیقی صلاحیتوں سے کام کرنے کی ترغیب دی۔ پروفیسر اگروال نے اس طرح کے ممتاز بین الاقوامی پروگرام کے انعقاد پر منتظمین کو مبارکباد پیش کی۔ڈاکٹر بی کے بندھوپادھیائے اور پروفیسر بھیم سنگھ، سابق ڈین اور ماہر تعلیم، آئی آئی ٹی دہلی نے ہندوستان اور دنیا میں شمسی تنصیبات کی تاریخ کے بارے میں گفتگو کی۔

پروفیسر اختر کلام نے اپنے کلیدی خطبے میں اکیسویں صدی کی اسمارٹ گرڈ ٹکنالوجی کے بارے میں تذکرہ کیا اور کہا کہ ہندوستان میں ا سمارٹ گرڈ ٹکنالوجی کو نافذ کرنے کی بڑی صلاحیت ہے۔ ڈاکٹر اے کے ترپاٹھی نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف سولر انرجی نے اپنے اہم خطاب میں مندوبین کو این آئی ایس ای میں جاری تحقیقی سرگرمیوں سے آگاہ کیا اور ان امور پر روشنی ڈالی جہاں محققین اپنا حصہ ڈال سکتے ہیں۔پروفیسر ہوئی وانگ نے اپنے اہم خطبے میں بجلی کے الیکٹرانکس کی ایپلی کیشنز میں آنے والی ٹیکنالوجیز کے بارے میں تفصیلات پر روشنی ڈالی۔کانفرنس میں 1000 کے قریب مندوبین اور مہمانوں نے شرکت کی۔

وائس چانسلر پروفیسر نجمہ اختر اور رجسٹرار مسٹر اے پی صدیقی (آئی پی ایس) نے کانفرنس کے لئے نیک خواہشات کا اظہار کیا۔ ڈپارٹمنٹ آف الیکٹریکل انجینئرنگ، جامعہ ملیہ اسلامیہ نے یونیورسٹی کے صد سالہ تقریبات کی مناسبت سے 16-17 نومبر 2019 کو پاور الیکٹرانکس، کنٹرول اینڈ میشن سے متعلق ایک دو روزہ بین الاقوامی کانفرنس کا انعقاد کیا۔ اس کانفرنس میں 9 ممالک کے نمائندوں نے شرکت کی۔

کانفرنس کو 342 مقالات موصول ہوئے جن میں سے 157 کو جائزہ لینے کے بعد قبول کیا گیا۔ کانفرنس کے دوران 21 متوازی سلاٹوں میں 128 وقیع مقالات پیش کیے گئے۔

کانفرنس میں تین ٹیوتوریل اور چار کلیدی خطبات پیش کیے گئے۔پروفیسر کے کے اگروال، چیئرمین، قومی بورڈ آف ایکریڈیشن (این بی اے) مہمان خصوصی تھے جبکہ ڈاکٹر بی کے بندھوپادھیائے، عالمی بینک کے سینئر ایڈوائزر افتتاحی اجلاس کے مہمان خصوصی تھے۔ شعبے کے سربراہ پروفیسر زیڈ اے جعفری ڈین فیکلٹی آف۔ انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی اور پروفیسر ابراہیم نے مہمانوں اور نمائندوں کا خیرمقدم کیا۔