وکاس دوبے کا چیپٹر ابھی ختم نہیں ہوا، اب مددگاروں پر ہے پولس کی نظر، 2 گرفتار

انکاؤنٹر میں وکاس دوبے کی ہلاکت کے بعد بھی اتر پردیش پولس سرگرم نظر آ رہی ہے۔ اب اتر پردیش ایس ٹی ایف وکاس کے ساتھیوں اور مددگاروں پر شکنجہ کستی ہوئی نظر آ رہی ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

بدنامِ زمانہ گینگسٹر وکاس دوبے کا چیپٹر ہنوز ختم نہیں ہوا ہے۔ وکاس دوبے کے انکاؤنٹر کے بعد بھی اتر پردیش پولس کی سرگرمی اور کارروائی جاری ہے۔ پولس اب وکاس دوبے کو پناہ دینے والوں پر شکنجہ کس رہی ہے۔ پولس نے اس معاملے میں مدھیہ پردیش واقع گوالیر کے رہنے والے دو لوگوں کو گرفتار کیا ہے۔ خبروں کے مطابق پولس نے جن لوگوں کو گرفتار کیا ہے ان کے اوپر الزام ہے کہ انھوں نے وکاس کے دو ساتھیوں کو اپنے یہاں پناہ دی۔

خبروں کے مطابق پولس نے جن دو لوگوں کو گرفتار کیا ہے ان کا نام اوم پرکاش پانڈے اور انل پانڈے ہے۔ کانپور پولس نے بتایا کہ دونوں لوگوں کے خلاف کانپور میں کیس درج ہے۔ بتایا جا رہا ہے کہ کانپور انکاؤنٹر معاملے میں ششی کانت پانڈے عرف سونو اور شیوم دوبے کو اوم پرکاش پانڈے اور انل پانڈے نے اپنے یہاں چھپایا تھا۔

واضح رہے کہ وکاس دوبے نے 9 جولائی کی صبح تقریباً 9.30 بجے کے قریب اجین کے مہاکال مندر میں سرینڈر کیا تھا۔ وکاس دوبے کو گزشتہ جمعہ کو کانپور لایا جا رہا تھا لیکن اس دوران اچانک گاڑی پلٹنے کے بعد وکاس دوبے ایک زخمی پولس اہلکار کا ہتھیار چھین کر بھاگنے لگا اور پھر پولس فائرنگ میں اسے گولی لگی۔ زخمی حالت میں اسے اسپتال لے جایا گیا لیکن راستے میں ہی اس کی موت ہو گئی۔

Published: 11 Jul 2020, 4:11 PM
next