کیجریوال حکومت پھر پہنچی سپریم کورٹ، کہا- ’حکم کی تعمیل نہیں کر رہے سینئر بیوروکریٹس‘

سپریم کورٹ میں دہلی حکومت کی طرف سے پیش ہونے والے سینئر وکیل ابھیشیک منو سنگھوی نے کہا کہ سرکاری ملازمین نہ تو احکامات کو سن رہے ہیں اور نہ ہی ان پر عمل کر رہے ہیں

<div class="paragraphs"><p>سپریم کورٹ، تصویر آئی اے این ایس</p></div>

سپریم کورٹ، تصویر آئی اے این ایس

user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: دہلی کی کیجریوال حکومت نے ایک بار پھر یہ کہتے ہوئے سپریم کورٹ کا رخ کیا ہے کہ سینئر بیوروکریٹس اس کے احکامات کو نہیں سن رہے ہیں، لہذا عدالت اس معاملے کی فوری سماعت کرے۔ دہلی حکومت نے اپنی عرضی میں کہا ہے کہ سینئر نوکرشاہ منتخب حکومت کے احکامات پر عمل نہیں کر رہے ہیں۔ کیجریوال حکومت نے راجدھانی میں سینئر افسران کے تبادلوں اور تعیناتیوں سے متعلق معاملات میں لیفٹیننٹ گورنر کو سپریم پاور دینے والے متنازعہ قانون کے خلاف اپنی عرضی پر فوری سماعت کرنے کی اپیل کی ہے۔

سپریم کورٹ میں دہلی حکومت کی طرف سے پیش ہوئے سینئر وکیل ابھیشیک منو سنگھوی نے کہا ’’میں انتظامیہ کے درد کو بیان نہیں کر سکتا۔ سرکاری ملازمین نہ تو احکامات سن رہے ہیں اور نہ ہی ان پر عمل کر رہے ہیں۔‘‘ وہیں، چیف جسٹس ڈی وائی چندرچوڑ کی سربراہی والی بنچ نے دہلی حکومت کی طرف سے داخل کی گئی عرضی کو فوری طور پر درج کرنے سے انکار کر دیا، جس میں پارلیمنٹ کی طرف سے خدمات کی بے ضابطگی سے متعلق لائے گئے قانون کی آئینی حیثیت کو چیلنج کیا گیا تھا۔


سی جے آئی چندرچوڑ نے سنگھوی کو بتایا کہ پرانی آئینی بنچ کے معاملات ہیں جن کی ہم فہرست بنا رہے ہیں اور 7 ججوں کی بنچ کے دو کیس اگلے دو ہفتوں میں آنے والے ہیں۔ وہ برسوں سے زیر التواء ہیں۔ انہوں نے چار ہفتوں کے بعد نئے سرے سے اس معاملے کا ذکر کرنے کی اجازت دی اور کہا کہ ’’مجھے فیصلہ کرنے دیں۔ میں یہ بھی دیکھ سکوں گا کہ کون سا بنچ دستیاب ہے۔‘‘

سپریم کورٹ نے ہدایت کی کہ اس دوران کیس میں دلائل مکمل کر لیے جائیں۔ اس نے دونوں فریقوں کے لیے نوڈل وکیل بھی مقرر کیا اور ایک مشترکہ تالیف تیار کرنے کی ہدایت کی۔

وہیں، دہلی کے لیفٹیننٹ گورنر کی طرف سے پیش ہوئے ایڈیشنل سالیسٹر جنرل سنجے جین نے کہا کہ تعین کے لیے سوالات نئے سرے سے تیار کرنے ہوں گے۔ اس پر سی جے آئی چندر چوڑ نے کہا، ’’ڈاکٹر سنگھوی اور آپ (جین) ایک ساتھ بیٹھ کر ہمیں متفقہ مسائل بتا سکتے ہیں۔‘‘


سپریم کورٹ کی ایک آئینی بنچ نیشنل کیپیٹل ٹیریٹری آف دہلی (ترمیمی) ایکٹ 2023 کے خلاف دہلی حکومت کی درخواست پر سماعت کرے گی، جو قومی راجدھانی میں سینئر بیوروکریٹس کے تبادلوں اور تعیناتیوں کے بارے میں پہلے مرکز کے ذریعہ جاری کردہ آرڈیننس کی جگہ لے گا۔

آرڈیننس، جو اب قانون کی شکل لے چکا، سپریم کورٹ کے پانچ ججوں کی آئینی بنچ کے دہلی میں پولیس، پبلک آرڈر اور زمین کے علاوہ خدمات کا کنٹرول منتخب حکومت کو سونپنے کے بعد لایا گیا تھا۔

دہلی کی عام آدمی پارٹی کی حکومت نے آرڈیننس کی آئینی حیثیت کو چیلنج کرتے ہوئے سپریم کورٹ کا رخ کیا تھا اور کہا تھا کہ یہ آرٹیکل 239اے اے میں دہلی کے قومی راجدھانی علاقہ کے لیے درج وفاقی، جمہوری حکمرانی کی اسکیم کی خلاف ورزی کرتا ہے اور یہ واضح طور پر صوابدیدی ہے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;