انتخابات کے پیش نظر خواتین ریزرویشن بل کو فروغ دینے والی حکومت کا ارادہ کچھ اور ہے! کھڑگے

لوک سبھا میں خاتون ریزرویشن بل پر بحث سے پہلے کانگریس صدر ملکارجن کھڑگے نے حکومت کے ارادوں پر سوال اٹھایا اور کہا کہ انہیں لگتا ہے کہ حکومت انتخابات کو ذہن میں رکھتے ہوئے اسے فروغ دے رہی ہے

<div class="paragraphs"><p>کانگریس صدر کھڑگے / آئی اے این ایس</p></div>

کانگریس صدر کھڑگے / آئی اے این ایس

user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: لوک سبھا میں خاتون ریزرویشن بل پر بحث سے پہلے کانگریس صدر اور راجیہ سبھا میں اپوزیشن لیڈر ملکارجن کھڑگے نے بدھ کو حکومت کے ارادوں پر سوال اٹھایا اور کہا کہ انہیں لگتا ہے کہ حکومت انتخابات کو ذہن میں رکھتے ہوئے اسے فروغ دے رہی ہے۔

پارلیمنٹ کے خصوصی اجلاس کے تیسرے دن خواتین ریزرویشن بل سے قبل اپنی رہائش گاہ پر میڈیا سے بات کرتے ہوئے کھڑگے نے کہا، ’’2010 میں ہم نے راجیہ سبھا میں بل پاس کیا تھا لیکن لوک سبھا میں اسے پاس نہیں کیا جا سکا، تو یہ کوئی نیا بل نہیں ہے۔ اگر وہ اسی بل کو آگے بڑھاتے تو یہ کام جلد ہو گیا ہوتا۔‘‘


انہوں نے کہا، ’’مجھے لگتا ہے کہ وہ انتخابات کے پیش نظر اس کی تشہیر کر رہے ہیں لیکن درحقیقت حد بندی یا مردم شماری ہونے تک، آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ اس میں کتنا وقت لگے گا۔ وہ پہلے والے کو بھی جاری رکھ سکتے تھے لیکن ان کے ارادے مختلف ہیں۔ ہم اصرار کریں گے کہ خواتین کے ریزرویشن کو لانا پڑے گا اور ہم مکمل تعاون کریں گے لیکن خامیوں اور کوتاہیوں کو دور کیا جانا چاہیے۔‘‘

ان کا یہ بیان آئین (128 ویں ترمیم) بل 2023 کے لوک سبھا میں کاروبار کی ضمنی فہرست میں پیش کیے جانے کے ایک دن بعد سامنے آیا۔ خاتون ریزرویشن بل میں تجویز کیا گیا ہے کہ ریزرویشن 15 سال کی مدت تک جاری رہے گا اور خواتین کے لیے مخصوص نشستوں کے اندر درج فہرست ذاتوں اور درج فہرست قبائل کے لیے کوٹہ ہوگا۔ تاہم ذرائع نے بتایا کہ 2024 کے لوک سبھا انتخابات میں اس قانون کے لاگو ہونے کا امکان نہیں ہے۔ کہا جا رہا ہے کہ اسے حد بندی کا عمل ختم ہونے پر ممکنہ طور پر 2029 کے بعد ہی نافذ کیا جائے گا، میں۔


حد بندی کے عمل کے آغاز کے بعد ریزرویشن نافذ ہو جائے گا اور 15 سال تک جاری رہے گا۔ بل کے مطابق خواتین کے لیے مخصوص نشستیں ہر حد بندی کے بعد تبدیل کی جائیں گی۔ حکومت نے کہا کہ خواتین پنچایتوں اور میونسپل اداروں میں نمایاں طور پر حصہ لیتی ہیں لیکن اسمبلیوں اور پارلیمنٹ میں ان کی نمائندگی ابھی تک محدود ہے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ خواتین مختلف نقطہ نظر لاتی ہیں اور قانون سازی کی بحث اور فیصلہ سازی کے معیار کو تقویت دیتی ہیں۔ کانگریس نے اس بل کو ’انتخابی جملہ‘ قرار دیتے ہوئے اسے ملک کی خواتین اور لڑکیوں کے ساتھ دھوکہ بھی قرار دیا ہے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;