مرکزی حکومت کو ملی ’سپریم‘ راحت، عدالت عظمیٰ کا الیکشن کمشنرز کی تقرری سے متعلق قانون پر روک لگانے سے انکار

نئے قانون کے تحت وزیر اعظم کی صدارت والا پینل چیف الیکشن کمشنر اور دیگر الیکشن کمشنرز کا انتخاب کرے گا، نئے قانون کے مطابق پینل میں چیف جسٹس آف انڈیا کو شامل نہیں کیا جائے گا۔

سپریم کورٹ / آئی اے این ایس
سپریم کورٹ / آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

سپریم کورٹ نے چیف الیکشن کمشنر اور دیگر الیکشن کمشنرز کی تقرری سے متعلق نئے قانون کے عمل پر روک لگانے سے آج انکار کر دیا۔ اس فیصلے کو مرکزی حکومت کے لیے راحت بھرا تصور کیا جا رہا ہے۔ دراصل نئے قانون کے تحت وزیر اعظم کی صدارت والا پینل چیف الیکشن کمشنر اور دیگر الیکشن کمشنرز کی تقرری کرے گا اور اس پینل میں چیف جسٹس آف انڈیا کو شامل نہیں کیا جائے گا۔

چیف الیکشن کمشنر اور دیگر الیکشن کمشنرز کی تقرری سے متعلق نئے قانون کے خلاف عدالت میں اپنی بات رکھ رہے سینئر وکیل پرشانت بھوشن نے کہا کہ لوک سبھا انتخاب قریب ہے، اس لیے فی الحال اس پر عبوری روک لگائی جانی چاہیے، لیکن عدالت نے ان کی درخواست کو درکنار کر دیا۔ جسٹس سنجیو کھنہ کی ڈویژنل بنچ میں معاملے کی سماعت کے دوران پرشانت بھوشن نے اس بات پر زور دیا کہ لوک سبھا انتخاب قریب ہے اور یہ قانون غیر جانبدارانہ انتخاب کی راہ میں رخنہ بن سکتا ہے۔ اس پر جسٹس نے مداخلت کرنے سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ ہم اپنی حد جانتے ہیں۔ جب پارلیمنٹ کے ذریعہ کسی قانون کو بنایا جاتا ہے تو اس پر عبوری روک لگانے کا کیا مطلب ہوتا ہے، یہ ہمیں پتہ ہے۔ اس لیے فی الحال ہم کوئی روک نہیں لگائیں گے۔


واضح رہے کہ نئے قانون کے مطابق چیف الیکشن کمشنر اور دیگر الیکشن کمشنرز کی تقرری صدر جمہوریہ کے ذریعہ ایک سلیکشن کمیٹی کی سفارش پر کی جائے گی۔ وزیر اعظم اس کمیٹی کے صدر ہوں گے۔ اس کے دیگر اراکین میں لوک سبھا کے حزب مخالف لیڈر اور وزیر اعظم کے ذریعہ نامزد مرکزی کابینہ کے ایک وزیر ہوں گے۔ پرشانت بھوشن کی دلیل تھی کہ الیکشن کمشنرز کی تقرری والے پینل سے چیف جسٹس آف انڈیا کو ہٹا کر سپریم کورٹ کو نظر انداز کیا گیا ہے۔ حالانکہ بنچ نے ان کی درخواست کو ناقابل قبول مانا۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;