شاہجہاں پور ریپ کیس: ایس آئی ٹی کی چنمیا نند سے پوچھ گچھ

ایس آئی ٹی ٹیم نے عصمت دری کے ملزم بی جے پی لیڈر و سابق مرکزی وزیر سوامی چنمیا نند سے پوچھ گچھ کی اور ہاسٹل میں لڑکی کے کمرے کی تلاشی بھی لی۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا

یو این آئی

شاہجہانپور: شاہجہاں پور کی قانون کی طالبہ کے ذریعہ ضلع انتظامیہ پر سخت الزامات لگانے اور بی جے پی لیڈر و سابق مرکزی وزیر سومی چنمیا نند پر عصمت دری کے الزامات کو دوہرانے کے بعد پورے معاملے کی جانچ کررہی ایس آئی ٹی ٹیم نے منگل کو بی جے پی لیڈر سے پوچھ گچھ کی اور ہاسٹل میں لڑکی کے کمرے کی تلاشی لی۔

آئی جی نوین ارورا کی قیادت والی ایس آئی ٹی ٹیم سوامی چنمیا نند کے آشرم پہنچی ۔ٹیم نے پہلےسوامی سے پوچھ گچھ کی اور اس کے بعد وہاں سے دیگر شواہد اکٹھا کئے۔ بی جے پی لیڈر سے پوچھ گچھ کی کاروائی گھنٹوں تک چلی جس کی ویڈیو گرافی بھی کی گئی ہے۔ٹیم نے آشرم میں لگائے گئے سی سی ٹی وی کے فوٹیج بھی حاصل کئے اور اس کے بعد متأثرہ کےہاسٹل کے کمرے میں گئی۔

لڑکی نے پیر کو میڈیا کے سامنے اپنے بیان میں کہا تھا بی جے پی لیڈر کے خلاف شواہد اس کے ہاسٹل کے کمرے میں تھے۔اس نے سوامی چنمیانند کے خلاف ریپ، اغوا اور دھمکی کا مقدمہ درج کرایا ہے جبکہ لڑکی کی جانب سے لگائے الزامات کے جواب میں بی جے پی لیڈر نے لڑکی پر 5 کروڑ روپئے کے مطالبے کا کیس فائل کیا ہے۔

پیر کو سوامی چنمیا نند پر جنسی ہراسانی کا الزام لگانے والی قانون کی طالبہ نے میڈیا کے سامنے اپنا بیان دیتے ہوئے دعوی کیا تھا کہ اسے یوپی حکومت سے انصاف نہیں ملے گا۔اس موقع پر طالبہ نے لوکل ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ کو معطل کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے الزام لگایا تھا کہ وہ اس معاملے میں اس پر منھ نہ کھولنے کی دھمکی دے رہے ہیں۔

اس سے قبل طالبہ اور اس کے اہل خانہ میڈیا کے سامنے آئے تھے اور انہوں نے دعوی کیا تھا کہ مقامی پولیس سوامی کے خلاف ریپ کا مقدمہ نہیں درج کررہی ہے۔اس کے بعد کرکر دما پولیس اسٹیشن نئی دہلی میں ایف آئی آر درج کی گئی اور اس کے بعد تفتیش کے لئے ایس آئی ٹی کو ٹرانسفر کردیا گیا۔طالبہ نے مقامی انتظامیہ پر سوامی کی مدد کا الزام لگایا تھا۔