سنجیو بھٹ کو بنیادی انسانی حقوق سے محروم رکھا گیا: شویتا بھٹ

سابق آئی پی ایس افسر سنجیو بھٹ کی اہلیہ شویتا بھٹ نے بدھ کو کیرلہ اسمبلی حلقہ میں اپوزیشن لیڈر رمیش چناتھلا سے ملاقات کی۔ سنجیو بھٹ 1990 میں حراست میں ہوئی موت کے ایک معاملے میں جیل میں بند ہیں۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

ترووانت پورم: سابق آئی پی ایس افسر سنجیو بھٹ کی اہلیہ شویتا بھٹ نے بدھ کو کیرلہ اسمبلی حلقہ میں اپوزیشن لیڈر رمیش چناتھلا سے ملاقات کی۔ سنجیو بھٹ 1990 میں حراست میں ہوئی موت کے ایک معاملے میں جیل میں بند ہیں۔

شویتا بھٹ نے الزام عائد کیا ہے کہ ان کے شوہر کو جیل میں بنیادی انسانی حقوق سے محروم رکھا جارہا ہے۔ وہ یہاں وزیراعلی پنارئی وجین، کانگریس کی اعلی قیادتوں اور انڈین یونین مسلم لیگ کے لیڈروں سے ملنے کے لئے آئی ہیں۔

شویتا بھٹ نے کہا ہے کہ وہ پارلیمنٹ میں اس مسئلہ کو اٹھانے کے لئے کانگریس پارٹی اور ان کے ممبران پارلیمنٹ کی مدد لینے آئی ہیں۔ انہوں نے اپوزیشن لیڈر سے کہا ہے کہ ناانصافی کے خلاف اپنی لڑائی کے تحت انہوں نے ہائی کورٹ میں اپیل دائر کی ہے۔

بعد میں یہاں نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے اپوزیش لیڈروں نے کہا کہ سنجیو بھٹ کا خاندان مرکز میں فاشسٹ حکومت کا شکار ہوئے ہیں۔

چنا تھلا نے کہا کہ ہم سنجیو بھٹ کی اہلیہ کو اخلاقی حمایت دیتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ اس مسئلہ پر وزیراعلی سے بھی ملاقات کریں گے۔ شویتا بھٹ کے ساتھ ان کے بیٹے اور کیرلہ اسمبلی میں اپوزیشن کے ڈپٹی لیڈر ڈاکٹر ایم کے منیر بھی تھے۔