ممبئی کی معذور بہادر بیٹی روشن آراء نے ایم ڈی کے ساتھ ڈاکٹر بن کر ملک و قوم کا نام روشن کیا

روشن نے 2016 میں سیٹھ جی ایس میڈیکل کالج (کے ای ایم اسپتال) سے فرسٹ کلاس کے ساتھ ایم بی بی ایس پاس کیا۔

روشن آراء
روشن آراء
user

یو این آئی

ممبئی: ممبئی کے مضافاتی علاقہ جوگیشوری کی رہائشی ڈاکٹر روشن جواد کا بچپن کا خواب تقریباً مکمل ہو چکا ہے، تیرہ سال قبل جب وہ ٹرین حادثے میں اپنی دونوں ٹانگیں کھو بیٹھی تھیں، تب اس کے دل میں یہ خوف پیدا ہو گیا کہ اس کی زندگی رک گئی ہے اور ڈاکٹر بننا مشکل ہو جائے گا، لیکن اپنے عزم و ہمت کی بدولت روشن آراء آج ایم ڈی ڈاکٹر بن چکی ہیں۔

روشن آراء 29 اکتوبر 2008 کو اندھیری سے جوگیشوری ٹرین کے ذریعے سفر کے دوران پٹریوں پر گر گئیں اور اس کی ٹانگیں پہیوں کے نیچے آ گئیں۔ چلتی ٹرین کے نیچے اس کے نچلے اعضاء ٹخنوں سے کٹ گئے تھے۔ روشن آراء جس نے 2008 میں دسویں جماعت میں 92.2 فیصد اسکور کیا تھا، باندرا کے انجمن اسلام گرلزہائی اسکول اور کالج سے امتحان دے کر گھر لوٹ رہی تھیں۔ سبزی فروش کی بیٹی کا ڈاکٹر بننے کا سفر آسان نہیں تھا۔ داخلہ امتحان میں کامیاب ہونے کے بعد بھی اسے ایم بی بی ایس میں داخلہ کے لیے بامبے ہائی کورٹ سے رجوع کرنا پڑا۔ ایک قاعدہ تھا جس کے تحت صرف "70 فیصد تک معذور" افراد کو ادویات پڑھنے کی اجازت تھی، لیکن وہ حادثے کے بعد 86 فیصد معذور پائی گئی۔


داخلہ کے لیے قانونی جنگ کے دوران اسے عدالت کے کئی چکر لگانے پڑے یہاں تک کہ مالی مسائل نے خاندان کو پریشان کر دیا۔ تب بامبے ہائی کورٹ کے چیف جسٹس، جسٹس موہت شاہ نے ہدایت کی کہ روشن کو داخلہ دیا جائے اور اس کے بعد انہوں نے کبھی پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا۔ روشن نے 2016 میں سیٹھ جی ایس میڈیکل کالج (کے ای ایم اسپتال) سے فرسٹ کلاس کے ساتھ ایم بی بی ایس پاس کیا۔ اس نے 2018 میں پی جی میڈیکل انٹری امتحانات میں کامیابی حاصل کی اور اسی کالج میں ایم ڈی (پیتھالوجی) کے لیے داخلہ لے لیا۔

انہوں نے کہا کہ "ایم ڈی میں داخلہ لینے سے پہلے مجھے 86 فیصد معذوری کا سامنا کرنا پڑا۔ فارم آن لائن لگائے جانے تھے اور میرے پاس صرف دو دن تھے۔ اس وقت کے رکن پارلیمنٹ کریٹ سومیا نے مرکزی وزیر صحت سے میرے دستاویزات کے ساتھ ملاقات کی اور مجھے معلوم ہوا کہ داخلے کے لیے معذوروں کی اوپری حد بدل دی گئی ہے۔ میں نے درخواست دی اور داخلہ لے لیا۔"


ایم ڈی میں اپنے دوسرے سال کے دوران، روشن کو ہڈیوں کے ٹیومر کی تشخیص ہوئی۔ انہوں نے کہا کہ "میرا آپریشن کیا گیا اور اس دوران ہماری ایچ او ڈی، ڈاکٹر امیتا جوشی، میرے بیچ میٹ، اساتذہ اور دوستوں نے میری بہت مدد کی۔" اعلان کردہ ایم ڈی کے نتائج میں انہوں نے کے ای ایم پیتھالوجی ڈیپارٹمنٹ میں 65 فیصد نمبروں کے ساتھ چوتھا رینک حاصل کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ "ان کے پاس ایم بی بی ایس اور ایم ڈی کے لیے دو سالہ بانڈ سروس ہے اور وہ اسے پہلے مکمل کرے گی۔ اس کے بعد اگر کسی سرکاری اسپتال میں خالی جگہ ہے تو میں درخواست دوں گی۔ میرا منصوبہ ایک دیہی علاقے میں ایک لیبارٹری اور تشخیصی مرکز شروع کرنا ہے جہاں لوگ اس وقت میڈیکل ٹیسٹ کے لیے لمبی دوری کا سفر کرتے ہیں۔ اگر مجھے مالی مدد ملتی ہے تو میں اسے شروع کروں گی یا اس وقت تک انتظار کروں گی جب تک کہ میں لیبارٹری شروع کرنے کے لیے مالی طور پر لیس نہیں ہوں۔ میرے سینٹر میں رعایتی ٹیسٹنگ اور غریبوں کی مفت جانچ ہوگی۔"

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔