قومی

ایس پی۔بی ایس پی کے اتحاد میں شامل ہونے کیلئے ہم انتظار کریں گے: آر ایل ڈی

آر ایل ڈی نے کے ترجمان نے ایس پی اور بی ایس پی کے درمیان ہوئے اتحاد کا استقبال کرتے ہوئے کہا ہے کہ بی جے پی کے خلاف بنے اتحاد میں شامل ہونے کے لئے ان کی پارٹی انتظار کرنے کو تیار ہے۔

تصویر یو این آئی

یو این آئی

لکھنؤ: راشٹریہ لوک دل (آر ایل ڈی) نے سماجوادی پارٹی(ایس پی) اور بہوجن سماج پارٹی(بی ایس پی) کے درمیان ہوئے اتحاد کا استقبال کرتے ہوئے کہا ہے کہ بی جے پی کے خلاف بنے اتحاد میں شامل ہونے کے لئے ان کی پارٹی انتظار کرنے کو تیار ہے۔

آر ایل ڈی کے ترجمان انل دوبے نے سنیچر کو یواین آئی سے کہا کہ غریب، کسان اور کمزور لوگوں کے مفادات کے تحفظ کے لئے ان کی پارٹی عام انتخابات میں بی جے پی کے خلاف اتحاد کی حامی ہے اور اس کے لئے حال میں ہی پارٹی کے نائب صدر جینت چودھری کی ملاقات ایس پی صدر اکھلیش یادو سے ہوئی تھی۔ یہ گفتگو کا فی اہم تھی اورامید ہے کہ جلد ہی اس کے مثبت نتائج سب کے سامنے آئیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ایس پی۔بی ایس پی نے اتحادی پارٹیوں کے لئے کچھ سیٹیں چھوڑی ہیں۔ اس کا مطلب ہے کہ آر ایل ڈی کے لئے امکانات روشن ہیں ویسے بھی پارٹی کو اس معاملے میں کوئی جلدی نہیں کرنی ہے۔ انہیں پورا بھروسہ ہے کہ ایس پی صدر آر ایل ڈی کو احترام دیں گے جس سے بی جے پی کے خلاف فیصلہ کن لڑائی میں اور پختگی آئےگی۔

اپنے مطالبے کے مطابق سیٹیں نہ ملنے کی صورت میں متبادل کے طور پر گانگریس سے بات چیت کے امکانات پر کسی بھی قسم کے تبصرے سے کنارہ کشی اختیار کرتے ہوئے مسٹر دوبے نے کہا کہ بی جے پی کے خلاف کھڑی ہونے والی ہر طاقت کے ساتھ ان کی پارٹی کندھے سے کندھا ملا کر کھڑی ہوگی۔ پارٹی کو کوئی جلد بازی نہیں ہے۔ انہیں بھروسہ ہے کہ آر ایل ڈی بلا آخرایس پی۔ بی ایس پی اتحاد کا حصہ بنے گی۔

پارٹی ذرائع کے مطابق آرایل ڈی عام انتخابات میں مغربی اترپردیش میں کم سے کم چھ سیٹیں چاہتی ہے۔ باغپت، امروہہ، متھرا، مظفر نگر، ہاتھرس اور بلند شہر میں آر ایل ڈی کافی مضبوط ہے۔ پارٹی کو امید ہے کہ ایس پی۔ بی ایس پی قیادت ان کے مطالبے پر سنجیدگی سے غور کرے گی۔

تمام تصاویر یو این آئی