محض 20 منٹ میں سلیکشن کمیٹی کو متاثر کر گئے شاستری

ہندوستانی ٹیم کے دوبارہ کوچ بنائے گئے روی شاستری نے کپل دیو کی قیادت والی تین رکنی سلیکشن کمیٹی کو 20 منٹ میں ایسا متاثر کر دیا کہ کمیٹی نے انہیں اگلے دو سال کے لئے کوچ چن لیا۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

ممبئی: ہندوستانی ٹیم کے دوبارہ کوچ بنائے گئے روی شاستری نے کپل دیو کی قیادت والی تین رکنی سلیکشن کمیٹی کو 20 منٹ میں ایسا متاثر کر دیا کہ کمیٹی نے انہیں اگلے دو سال کے لئے کوچ چن لیا۔

ہندستانی کوچ کے عہدے کی دوڑ میں روی شاستری کے علاوہ مائیک هیسن، ٹام موڈی، رابن سنگھ اور لال چند راجپوت شامل تھے۔ ہندستانی کرکٹ کنٹرول بورڈ (بی سی سی آئی) کے ہیڈ کوارٹر میں سلیکشن کمیٹی کے ساتھ انٹرویو کا عمل صبح شروع ہوا اور سب سے پہلے سابق ہندستانی آل راؤنڈر رابن نے اپنا انٹرویو دیا۔

اس کے بعد ممبئی کے سابق کپتان اور 2007 کے ٹوئنٹی -20 ورلڈ کپ میں ہندستان کی خطابی جیت کے وقت منیجر رہے راجپوت نے اپنا انٹرویو دیا۔ سابق آسٹریلوی آل راؤنڈر موڈی نے آسٹریلیا سے اسکائپ کے ذریعے اپنا انٹرویو دیا۔ نیوزی لینڈ کے سابق کوچ هیسن انٹرویو دینے کے لئے خود موجود تھے۔ شاستری نے سب سے آخر میں ویسٹ انڈیز سے اسکائپ کے ذریعے اپنا پریزنٹیشنز رکھا۔ کپل دیو، انشمن گايكواڈ اور شانتا رنگاسوامي کی تین رکنی سلیکشن کمیٹی نے تمام پریزنٹیشنز دیکھنے کے بعد شاستری کو کوچ کے عہدے کے لئے منتخب کر لیا۔

شاستری نے سلیکشن کمیٹی کے سامنے تقریبا 20 منٹ تک اپنی بات رکھی جس میں انہوں نے بتایا کہ جب آخری بار انہوں نے 2017 میں انل کمبلے کی جگہ ٹیم کا چارج سنبھالا تھا تب ٹیم کیسی تھی اور دو سال کے ان کی رہنمائی میں ٹیم نے کیا کامیابیاں حاصل کیں۔ سلیکشن کمیٹی کے ایک رکن کے مطابق شاستری اپنے پریزنٹیشنز میں مکمل طور واضح، درست اور مستقبل کو لے کر تیار تھے۔

شاستری کے لئے ان کے 2021 تک کی مدت میں دو ٹوئنٹی -20 ورلڈ کپ سب سے بڑا چیلنج ہوں گے۔ پہلی عالمی کپ 2020 میں آسٹریلیا میں اور دوسرا عالمی کپ 2021 میں ہندستان میں ہوگا۔ شاستری 2016 میں جب ٹیم ڈائریکٹر تھے تب ہندستان اپنی میزبانی میں سیمی فائنل تک پہنچا تھا۔ اگرچہ شاستری کے پاس هیسن موڈی اور رابن کی طرح کسی ٹوئنٹی -20 فرنچائزز ٹیم کو کوچنگ دینے کا کوئی تجربہ نہیں ہے لیکن ٹیم کے ساتھ ان کا تال میل زبردست ہے۔

هیسن، موڈی اور رابن تینوں کے پاس گھریلو ٹی -20 ٹورنامنٹوں میں کوچنگ کا طویل تجربہ ہے لیکن ایک اگست سے شروع ہو ئی عالمی ٹیسٹ چمپئن شپ اور مئی 2020 میں شروع ہونے والی ون ڈے لیگ کو دیکھتے ہوئے سلیکشن کمیٹی ایسا کوچ رکھنا چاہتی تھی جو تینوں ہی فارمیٹ میں ٹیم کی رہنمائی کر سکے۔ شاستری اس صورت میں باقی تینوں پر بازی مار لے گئے۔سلیکشن کمیٹی هیسن، موڈی اور رابن کے پریزنٹیشنز سے متاثر تو تھی لیکن اس کا ماننا تھا کہ ان تینوں نے گزشتہ کچھ وقت میں کسی بھی بین الاقوامی ٹیم کو کوچ نہیں کیا ہے اور وہ زیادہ تر دنیا بھر میں ٹی -20 لیگ سے منسلک رہے ہیں۔

سلیکشن کمیٹی نے شاستری سے کچھ مشکل سوال بھی پوچھے جس میں ہندستان کا کسی عالمی ٹورنامنٹ کو نہ جیت پانا اور کسی مشکل سیریز کو نہ جیت پانا بھی شامل تھا۔ شاستری نے ان پر بتایا کہ کن علاقوں میں ٹیم تھوڑا پیچھے رہی اور ان کے پاس اس کا کیا حل ہے۔شاستری نے سلیکشن کمیٹی کے ارکان کو ڈریسنگ روم کا ماحول دیکھنے کے لئے بھی مدعو کیا۔ انہوں نے بتایا کہ ڈریسنگ روم میں کپتان اپنا کام کرتا ہے اور ایک اہم کوچ کے طور پر ان کو جہاں ضروری ہوتا ہے وہ نہ صرف کپتان بلکہ ٹیم کے تمام ارکان کے ساتھ بات کرتے ہیں۔

Published: 17 Aug 2019, 9:10 PM
next