دہلی میں خطرناک آلودگی: ہیلتھ ایمرجنسی نافذ، کیجریوال کا اسکولز بند رکھنے کا اعلان

راجدھانی میں دم گھوٹنے والی آلودگی کی وجہ سے جمعہ کو حکومت نے دہلی کے سبھی اسکولوں کو پانچ نومبر تک بند رکھنے کا اعلان کیا

تصویر اے آئے آئی این ایس
تصویر اے آئے آئی این ایس

یو این آئی

نئی دہلی: راجدھانی میں دم گھوٹنے والی آلودگی کی وجہ سے جمعہ کو حکومت نے دہلی کے سبھی اسکولوں کو پانچ نومبر تک بند رکھنے کا اعلان کیا۔ دہلی کے وزیراعلی اروند کیجری وال نے ٹوئٹ کرکے کہا کہ آلودگی کی وجہ سے دہلی کے سبھی اسکول 5 نومبر تک بند رہیں گے۔ کیجری وال نےکہا کہ ’’دہلی میں پرالی کے بڑھتے دھوئیں کی وجہ سے آلودگی کی سطح بہت زیادہ ہوگئی ہے۔ اس لئے حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ دہلی کے سبھی اسکول 5 نومبر تک بند رہیں گے۔‘‘

ادھر، ہوا کی کوالٹی 410 اے آئی کیو (ایئر کوالٹی انڈیکس) تک گجرانے کے بعد سپریم کورٹ کے ذریعہ مقرر کردہ کمیٹی نے پبلک ہیلتھ ایمرجنسی کا اعلان کیا ہے۔ اے آئی کیو کے 400 کی سطح تک گرجانے کو خطرناک صورحال سمجھا جاتا ہے اور دہلی میں گزشتہ 5 دنوں سے اے آئی کیو اسی سطح پر بنا ہوا ہے۔ ہنگامی حالت کے اعلان کے ساتھ ہی ای پی سی اے نے 5 نومبر تک تمام تعمیراتی کاموں پر بھی پابندی عائد کردی ہے۔

امریکی سفارتخانے کے مطابق جمعہ کے روز سہ پہر 1 بجکر 5 منٹ پر پی ایم 2.5 کی سطح 450 تھی۔ امریکی سفارتخانے کے نزدیک صبح 9 بجے سے دوپہر 12 بجے تک ریڈنگ نہیں ہوتی ، کیونکہ پی ایم 2.5 کی سطح 500 سے اوپر چلی جاتی ہے اور اس کی پیمائش وہ نہیں کر پاتے ۔

فضائی آلودگی پر قابو پانے کے لئے مختلف ہدایات دی جارہی ہیں لیکن اس معاملے میں موسمی صورتحال زیادہ اہمیت رکھتی ہے اور اتوار تک آلودگی کے کم ہونے کی امید ظاہر کی جا رہی ہے۔

Published: 1 Nov 2019, 4:32 PM