پنجاب میں ہر حال میں امن-فرقہ وارانہ ہم آہنگی برقرار رکھنے کی ہدایت

پولیس کو سخت حفاظتی اقدامات کرنے اور ریاست میں امن اور فرقہ وارانہ ہم آہنگی کو یقینی بنانے کے لیے تمام ممکنہ احتیاطی اقدامات کرنے کی ہدایات دی ہیں۔

فائل تصویر آئی اے این ایس
فائل تصویر آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

لدھیانہ میں ہوا بم دھماکہ اور بے ادبی کے معاملوں نے پنجاب اسمبلی انتخابات سے قبل پنجاب کے امن اور قانون پر سوال کھڑے کر دئے ہیں ۔ حزب اختلاف کی سیاسی پارٹیوں نے حکومت پنجاب کی تنقید کرنی شروع کر دی ہے ۔ انتخابات کو دیکھتے ہوئے پنجاب حکومت نے شر پسند عناصر کے خلاف سخت کارروائی شروع کر دی ہے۔

پنجاب کے کارگذار ڈائریکٹر جنرل آف پولیس سدھارتھ چٹوپادھیائے نے تمام پولیس کمشنروں اور سینئر ضلع پولیس سپرنٹنڈنٹ کو سخت حفاظتی اقدامات کرنے اور ریاست میں امن اور فرقہ وارانہ ہم آہنگی کو یقینی بنانے کے لیے تمام ممکنہ احتیاطی اقدامات کرنے کی ہدایات دی ہیں۔


مسٹر چٹوپادھیائے نے لدھیانہ بم دھماکے کے تناظر میں اعلیٰ حکام کے ساتھ میٹنگ کی جس میں اے ڈی جی پی (انٹرنل سیکورٹی) آر این ڈھوکے، اے ڈی جی پی ایس ٹی ایف ہرپریت سنگھ سدھو، اے ڈی جی پی (انٹیلی جنس) اے ایس رائے، اے ڈی جی پی (الیکشن) ششی پربھا دویدی اور اے ڈی جی پی (لاء اینڈ آرڈر ) نریش اروڑہ نے ریاست میں جرائم کی صورتحال کا جائزہ لیا۔

انہوں نے کہا کہ کسی کو قانون ہاتھ میں لینے کی اجازت نہیں دی جائے اور اگر کوئی پرتشدد سرگرمیوں میں ملوث پایا گیا تو اس کے ساتھ سختی سے نمٹا جائے۔ ایسے لوگوں کے خلاف فوجداری مقدمات درج کیے جائیں۔


انہوں نے پولیس افسران کو متعلقہ اضلاع میں پولیس گشت (پٹرولنگ) کو تیز کرنے کی ہدایت کی۔ حساس علاقوں میں قائم چوکیوں پر پولیس کی مزید نفری تعینات کی جائے اور دن رات گشت تیز کی جائے۔ (یو این آئی کے انپٹ کے ساتھ)

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔