روحانی پیشوا کو ’بھگوان‘ قرار دینے کی پی آئی ایل! عرضی گزار کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی شروع

سپریم کورٹ نے حال ہی میں ایک عرضی گزار کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی شروع کی جس نے پی آئی ایل دائر کرنے کے بعد عائد ایک لاکھ روپے جمع نہیں کرائے تھے

<div class="paragraphs"><p>سپریم کورٹ، تصویر آئی اے این ایس</p></div>

سپریم کورٹ، تصویر آئی اے این ایس

user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے حال ہی میں ایک عرضی گزار کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی شروع کی جس نے پی آئی ایل دائر کرنے کے بعد عائد ایک لاکھ روپے جمع نہیں کرائے تھے۔ عرضی گزار نے روحانی پیشوا سری سری ٹھاکر انوکول چندر کو 'بھگوان' قرار دینے کی ہدایت دینے کا مطالبہ کیا تھا۔

جسٹس سی ٹی روی کمار اور پی وی سنجے کمار کی بنچ نے نوٹ کیا کہ درخواست گزار نے عدالت کی طرف سے عائد کردہ جرمانہ جمع نہیں کیا اور اس کی ہدایات کی جان بوجھ کر نافرمانی کی، لہذا اس پر توہین عدالت کی کارروائی شروع کرنے کی ہدایت کی گئی۔


گزشتہ سال دسمبر میں سپریم کورٹ نے عرضی گزار پر ایک لاکھ روپے کا جرمانہ عائد کرتے ہوئے کہا تھا کہ ’’اب لوگ ایسی پی آئی ایل دائر کرنے سے پہلے کم از کم چار بار سوچیں گے۔‘‘

پی آئی ایل پر غور کرنے سے انکار کرتے ہوئے عدالت عظمیٰ نے کہا تھا کہ درخواست مکمل طور پر غلط خیال پر مبنی ہے، جسے مثالی سزا کے ساتھ خارج کیا جانا چاہئے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ آرڈر کی تاریخ سے چار ہفتوں کے اندر ایک لاکھ روپے اس کی رجسٹری میں جمع کرانا ہوں گے۔

عرضی گزار اپیندر ناتھ دلائی نے وشو ہندو پریشد (وی ایچ پی)، راشٹریہ سویم سیوک سنگھ (آر ایس ایس)، بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی)، آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ (اے آئی ایم پی ایل بی)، نیشنل کرسچن کونسل، رام کرشنا مشن کو شامل کیا تھا۔ اس معاملہ میں مٹھ، گوردوارہ بنگلہ صاحب، پالنپوری استھانک واسی جین ایسوسی ایشن، بدھسٹ سوسائٹی آف انڈیا وغیرہ کیس میں دیگر فریق ہیں۔ عدالت نے کہا کہ ہندوستان ایک سیکولر ملک ہے اور ہر کسی کو اپنے مذہب کی پیروی کرنے کا پورا حق ہے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;