یوگی راج میں اسکولی بچوں کو نہیں ملا سویٹر، گایوں کو مل گئی جیکٹ

اتر پردیش میں کڑاکے کی ٹھنڈ جاری ہے لیکن سبھی اسکولی بچوں کو ابھی تک سویٹر نہیں ملے ہیں اور جن کو ملے ہیں ان کے سویٹر پھٹنے شروع ہو گئے ہیں

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

شمالی ہندوستان میں کڑاکے کی ٹھنڈ پڑ رہی ہے اور اتر پردیش کے وزیر تعلیم ستیش چندر دویدی نے قریب دو ہفتہ پہلے کہا تھا کہ ریاست کے اسکولوں میں طلباء کو سویٹر بانٹنے کا کام 25 دسمبر تک پورا ہو جائے گا لیکن ابھی تک زیادہ تر اسکولوں میں سویٹر نہیں پہنچے ہیں۔ وزیر تعلیم کا بیان آیا ہے کہ اضلاع میں سویٹر پہنچا دیے گئے ہیں اور دور دراز کے علاقوں میں سویٹر پہنچانے میں ایک دو دن لگیں گے۔

یہ حقیقت ہے کہ کچھ اسکولوں میں سویٹر تقسیم ہوئے ہیں لیکن جن اسکولوں میں سویٹر تقسیم ہوئے ہیں ان میں بھی سویٹر کی کوالٹی کو لے کر سوال کھرے کئے جا رہے ہیں۔ جن طلباء کو سویٹر ملے ہیں ان میں سے ایک طالب علم نے بتایا کہ اس کو دو دن پہلے جو سویٹر ملا تھا وہ پھٹ گیا ہے۔ دوسری جانب اسکولوں میں کم سویٹر پہنچنے کی بھی شکایات موصول ہو رہی ہیں۔ ایک اسکول ٹیچر نے اعتراف کیا ہے کہ سویٹر کچھ کم آئے تھے جس کی وجہ سے سبھی بچوں کو سویٹر نہیں ملے ہیں۔


واضح رہے کہ اتر پردیش کے اسکولوں میں ابھی تک سویٹر نہ پہنچنے کی خبر موصول ہو رہی ہیں جبکہ یہ سویٹر 25 دسمبر تک پہنچنے تھے۔ سویٹر نہ پہنچنے کی وجہ سے اس کڑاکے کی ٹھند میں اسکولی بچے ٹھند سے ٹھٹھر رہے ہیں۔ اس کے بر عکس ریاست سے خبر موصول ہو رہی ہے کہ گئو شالاؤں میں گایوں کو جوٹ کے جیکٹ پہنائے جا رہے ہیں۔ لوگوں کا کہنا ہے کہ اسکولی بچوں کا بھی کم از کم گایوں کے برابر تو خیال کیا ہی جانا چاہئے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔