پی ایم مودی جب ناکام ہو جاتے ہیں تو کشمیر کا سہارا لے کر ووٹ مانگتے ہیں: محبوبہ مفتی

جموں و کشمیر کی سابق وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے کہا کہ جب تک وہ (مرکزی حکومت) ہمارے حقوق واپس نہیں کرتے، اس وقت تک انہیں انتخاب لڑنے میں کوئی دلچسپی نہیں ہے

تصویر بشکریہ ٹوئٹر / @SahilMi04510705
تصویر بشکریہ ٹوئٹر / @SahilMi04510705
user

قومی آوازبیورو

سری نگر: جموں و کشمیر کی سابق وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے وزیر اعظم نریندر مودی کشمیر کے نام پر ووٹ مانگنے کا الزام عائد کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم مودی کو دفعہ 370 کا سہارا لینا پڑا رہا ہے، جب وہ ناکام ہو جاتے ہیں تو کشمیر اور 370 جیسے ایشوز کو اٹھاتے ہیں اور حقیقی ایشوز پر بات نہیں کرنا چاہتے۔

محبوبہ مفتی نے الزام لگایا کہ بی جے پی اور مرکز کے پاس کوئی حقیقی مسئلہ نہیں ہے اور نہ ہی دکھانے کے لئے کوئی کام ہے، لہذا وہ تقاریر میں ایسی باتیں کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا، ’’ان کے پاس ووٹ مانگنے کے لئے دکھانے کے لئے کچھ نہیں ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اب آپ جموں و کشمیر میں زمین خرید سکتے ہیں، ہم نے آرٹیکل 370 کو ختم کر دیا ہے۔ پھر وہ کہتے ہیں کہ وہ ویکسین مفت تقسیم کریں گے۔ آج، پی ایم مودی کو ووٹوں کے لئے آرٹیکل 370 کے بارے میں بات کرنا تھی۔ یہ حکومت ملکی مسائل حل کرنے میں مکمل طور پر ناکام ہو چکی ہے۔

پی ڈی پی رہنما نے اس قیاس پر بھی مرکزی حکومت پر حملہ کیا کہ ہندوستان کی جی ڈی پی نمو بنگلہ دیش سے کم رہے گی۔ انہوں نے کہا، "جب بات معیشت کے معاملے کی ہو تو ہم بنگلہ دیش سے بھی پیچھے ہیں۔ بیروزگاری ہو یا کوئی اور مسئلہ، یہ حکومت ہر محاذ پر ناکام ہو چکی ہے۔ جب وہ ہر جگہ ناکام ہوجاتے ہیں تو وہ کشمیر اور آرٹیکل 370 کو یاد کرتے ہیں۔

محبوبہ مفتی نے کہا کہ مجھے اس وقت تک کسی بھی انتخاب لڑنے میں دلچسپی نہیں ہے جب تک کہ وہ (مرکزی حکومت) ہمارے حقوق (370) واپس نہیں کرتے ہیں۔ میری جدوجہد اس وقت تک ختم نہیں ہوگی جب تک کہ جموں و کشمیر میں 370 کی بحالی نہ ہو جائے۔ میری جدوجہد مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے ہوگی۔ محبوبہ نے کہا کہ بی جے پی نے بابری مسجد کے آس پاس ایسا ماحول پیدا کیا گویا اس کا وجود ہی نہیں تھا۔

محبوبہ مفتی نے کہا کہ چین نے لداخ میں 1000 مربع کلومیٹر سے زیادہ اراضی پر قبضہ کیا۔ چین نے 370 کی منسوخی اور بھارت کی طرف سے کی جانے والی تبدیلیوں پر کھل کر اعتراض کیا ہے۔ وہ کبھی بھی اس سے انکار نہیں کر سکتے کہ جموں و کشمیر بین الاقوامی سطح پر اتنا مشہور کبھی نہیں تھا جیسا کہ اب ہے۔

خیال رہے کہ آرٹیکل 370 کو ہٹانے سے قبل محبوبہ مفتی کو پولیس نے تحویل میں لے لیا تھا۔ محبوبہ مفتی کو 434 دن بعد نظر بندی سے رہا کیا گیا ہے۔ اس کے بعد محبوبہ مفتی نے 370 کی بحالی کے لئے مہم کا آغاز کیا ہے اور اس مہم میں جموں وکشمیر کی تمام سیاسی جماعتیں ان کے ساتھ آ گئی ہیں۔

next