میرے والد سر چشمہ علم اور قیام امن کے داعی تھے: تمہید بخاری

گیارہویں جماعت میں زیر تعلیم تمہید بخاری نے ان خیالات کا اظہار اپنے والد کی پہلی برسی کے موقع پر اپنے ایک مضمون میں کیا ہے جو اُن کے والد کے انگریزی اخبار ’رائزنگ کشمیر‘ میں صفحہ اول پر شائع ہوا ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

سری نگر: نامور کشمیری صحافی مرحوم شجاعت بخاری کے فرزند تمہید بخاری نے اپنے والد کو سرچشمہ علم قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اُن کا صحافتی کیریر 25 برسوں پر محیط تھا اور لکھنے اور پڑھنے کو وہ تمام باقی کاموں پر ترجیح دیتے تھے۔ تمہید کا کہنا ہے کہ گھر میں قائم ذاتی کتب خانہ، جس میں مختلف موضوعات پر ہزاروں کی تعداد میں کتابیں موجود ہیں، میں میرے والد گھنٹوں بیٹھ کر کتابوں کی ورق گردانی کرتے تھے اور مختلف موضوعات پر مضامین تحریر کرتے تھے۔

گیارہویں جماعت میں زیر تعلیم تمہید بخاری نے ان خیالات کا اظہار اپنے والد کی پہلی برسی کے موقع پر اپنے ایک مضمون میں کیا ہے جو اُن کے والد کے انگریزی اخبار 'رائزنگ کشمیر' میں صفحہ اول پر شائع ہوا ہے۔

تمہید کی جانب سے اپنے والد کی پہلی برسی کے موقع پر تحریر کیے گئے اس پُر درد مضمون کو سوشل میڈیا پر بڑے پیمانے پر شیئر کیا جارہا ہے اور ٹوئٹر پر اس کے شیئر کرنے والوں میں حریت کانفرنس (ع) کے چیئرمین میر واعظ عمر فاروق اور سابق آئی اے ایس افسر شاہ فیصل خاص طور پر قابل ذکر ہیں۔

تمہید اپنے اس مضمون میں جہاں اپنے مقتول والد کو ایک نیک انسان، بہترین صحافی و علم وادب کا دلدادہ قرار دیتے ہوئے خراج عقیدت پیش کرتے ہیں وہیں ان کی جدائی کے تئیں اپنے کرب دل کو بھی بیان کرتے ہیں۔

وہ لکھتے ہیں: 'میرے والد کی رحلت کا ایک سال مکمل ہوا، 365 دن گزر گئے اُن کی آواز سنی نہ اُن کے مسکراتے چہرے کو دیکھا اور نہ کبھی دیکھیں گے، غم ایک ایسا سیاہ سوراخ ہے جو بے انتہا گہرا ہے، ایک انسان کے جذبات و احساسات کو خاکستر کرتا ہے، سال گزشتہ میرے لئے انتہائی کٹھن سال تھا، وہ ہر پل میرے لوح ذہن پر چھائے ہوئے ہیں، میری دل کی ہر دھڑکن کے ساتھ اُن کی یادیں دھڑکتی ہیں، اُن کی نصیحتیں اور حوصلہ افزائی مسلسل میرے گوش گزار ہو رہی ہیں'۔

تمہید اپنے مضمون میں اپنے والد کو امن کا داعی اور وادی کشمیر کے حالات کا نقیب قرار دیتے ہوئے لکھتے ہیں: 'پہلی برسی کے موقع پر میں اپنے والد کو محض والد یا ایک بااثر صحافی ہونے کے طور پر یاد نہیں کرتا ہوں بلکہ میں انہیں ایک نیک انسان ہونے کے تئیں خراج عقیدت پیش کرتا ہوں، ایک ایسے انسان کے بطور جس نے کشمیر کی بہبودی کے لئے کافی کام کیا، وہ سب سے زیادہ امن کے لئے محو جدوجہد تھے، انہوں نے اپنی تمام تر زندگی کشمیر کے حالات کو اجاگر کرنے کے لئے وقف کی تھی'۔

انہوں نے لکھا ہے کہ میرے والد کے انتقال کو بارہ مہینے گزر گئے، 8 ہزار 760 گھنٹے بیت گئے لیکن مجھے ایسا محسوس ہو رہا ہے جیسے زمانہ بیت گیا ہے میں آج بھی جب صبح نیند سے جاگتا ہوں تو سوچتا ہوں کہ یہ ایک ڈراؤنا خواب تھا لیکن جب میں پھر اٹھ کر باہری دنیا میں جاتا ہوں تو معلوم ہوتا ہے کہ دنیا میں مجھ جیسے بے شمار لوگ ہیں جن کی یہی کیفیت ہے۔ تمہید لکھتے ہیں کہ لوگ کہتے ہیں والدین کا انتقال کرنا قدرتی عمل ہے اور یہ ہر کسی کے ساتھ ہوتا ہے لیکن والد کو بچپن میں ہی کھونا ناقابل تلافی نقصان ہے۔

انہوں نے لکھا ہے: 'لوگ کہتے ہیں کہ والدین کو انتقال کرنا ایک قدرتی عمل ہے اور یہ ہر کسی کے ساتھ ہوتا ہے، لیکن والد کو اُس وقت کھونا جب بچہ ابھی گھونسلے میں ہی ہو ناقابل تلافی نقصان ہے، میری والدہ بہت ہی حوصلہ مند خاتون ہیں جنہوں نے اپنے بے انتہا غم کے باوصف غم کے گہرے گھاؤ کو بھرنے کی کوشش کی۔ 17 برس کی عمر میں مجھے ابھی کافی سیکھنا تھا جس کے لئے ان کی ضرورت تھی'۔

تمہید لکھتے ہیں کہ والد کے جانے کے بعد میری دنیا ہی بدل گئی، بعض اوقات مجھے لگتا ہے کہ امیدوں اور حقیقتوں میں کافی فرق ہوتا ہے، اس وقت مجھے لگتا ہے کہ میری دنیا ختم ہوگئی ہے لیکن پھر اللہ تعالیٰ ہمیشہ راہ دکھاتا ہے۔

وہ لکھتے ہیں کہ میرے والد اور میرے مامو نے رائزنگ کشمیر کو مارچ 2008 میں شروع کیا اور وہ اس کو مادر وطن کی خدمت کے لئے وقف کرنے کی کوشش کرتے تھے، وہ رائزنگ کشمیر محض ایک دفتر نہیں سمجھتے تھے بلکہ وہ دفتر کے عملے کو توسیعی کنبہ گردانتے تھے اور دفتر کے ہر ملازم کے ساتھ اپنے ہی کنبے کے فرد جیسا سلوک روا رکھتے تھے۔ تمہید کا کہنا ہے کہ ماموں کی سربراہی میں ادارہ تمام تر مشکلات اور رکاوٹوں کا ڈٹ کر مقابلہ کر رہا ہے اور اللہ کے کرم اور لوگوں کی دعاؤں کے باعث ادارہ ابھی بھی مستحکم ہے۔

واضح رہے کہ قریب تین دہائیوں تک میڈیا سے وابستہ رہنے والے شجاعت بخاری کو سال گزشہ 14 جون کی شام نامعلوم بندوق برداروں نے پریس کالونی سری نگر میں اپنے دفتر کے باہر نزدیک سے گولیوں کا نشانہ بنا کر قتل کردیا۔ ان کے پسماندگان میں والدین، بیوی، ایک بیٹے (تمہید) اور ایک لڑکی شامل ہیں۔