مودی مہنگائی اور اخراجات پر بھی گفتگو کریں: راہل گاندھی

راہل گاندھی نے ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا کہ "مرکزی حکومت کی ٹیکس وصولی کی وجہ سے عوام کے لئے گاڑی میں تیل بھرنا کسی امتحان سے کم نہیں ہے، پھر وزیر اعظم اس پر گفتگو کیوں نہیں کرتے ہیں؟ خرچہ پر بھی ہو چرچا"۔

راہل گاندھی، تصویر یو این آئی
راہل گاندھی، تصویر یو این آئی
user

یو این آئی

نئی دہلی: کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی نے آج طلبہ کے لئے وزیر اعظم نریندر مودی کے 'پرکشا پے چرچا' پروگرام پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ آسمان چھوتی ہوئی مہنگائی اور ایندھن کی قیمتیں بلند ترین سطح پر پہنچنے کے درمیان گاڑی میں تیل بھرنا بھی کسی امتحان سے کم نہیں ہے۔ اس لئے پی ایم مودی کو لوگوں کی جیب ڈھیلی ہونے کے پیش نظر 'خرچہ پہ چرچا' کرنا چاہیے۔

راہل گاندھی نے ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا کہ "مرکزی حکومت کی ٹیکس وصولی کی وجہ سے عوام کے لئے گاڑی میں تیل بھرنا کسی امتحان سے کم نہیں ہے، پھر وزیر اعظم اس پر گفتگو کیوں نہیں کرتے ہیں؟ خرچہ پر بھی ہو چرچا"۔

کانگریس کی میڈیا سیل کے سربراہ رندیپ سنگھ سورجے والا نے بھی کمر توڑ مہنگائی پر حکومت کو نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ’’73 سالوں میں سب سے مہنگی اور ظالم حکومت، ہر روز کسانوں پر کرتی ہے نئے وار۔ جو کبھی نہیں ہوا، وہ ظلم کر دکھایا۔ مودی سرکار نے ڈی اے پی کھاد کی قیمت میں 700 روپے کا اضافہ کیا، جس سے 1200 روپے کا 50 کلو ڈی اے پی 1900 روپے پر پہنچ گیا۔ مودی جی! پہلے ہی ایک ہیکٹیئر کی کاشت کی لاگت 15000 روپے تک پہنچ چکی ہے۔ سب کچھ یاد رکھا جائے گا"۔

واضح ہو کہ 30 مارچ کو ملک میں پٹرول ڈیزل کی قیمتوں میں کٹوتی ہوئی تھی۔ پٹرول کی قیمتوں میں 22 پیسے جبکہ ڈیزل کی قیمتوں میں 23 پیسے کمی کی گئی۔ کٹوتی کے بعد دہلی میں پٹرول کی قیمت 90.56 روپے فی لیٹر ہوگئی۔ اسی کے ساتھ ہی ڈیزل کی قیمت بھی کم ہوکر 80.87 روپے فی لیٹر ہوگئی ہے۔ تاہم پچھلے 8 دنوں سے خام تیل کی قیمتوں میں کمی کے باوجود ہندوستان کے عوام کو راحت نہیں ملی ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔