میرٹھ: ایودھیا معاملہ کے فیصلہ پر جشن! 8 افراد گرفتار

اترپردیش پولس نے سی آر پی سی کی دفعہ 144 کی خلاف ورزی کرنے اور ایودھیا قضیہ پر سپریم کورٹ کی جانب سے آنے والے فیصلے کے بعد ماحول خراب کرنے کی کوشش کرنے کے الزام میں پولس نے 8 افراد کو گرفتار کیا ہے

تصویر یو این آئی
تصویر یو این آئی

یو این آئی

میرٹھ: اترپردیش پولس نے سی آر پی سی کی دفعہ 144 کی خلاف ورزی کرنے اور ایودھیا قضیہ پر سپریم کورٹ کی جانب سے آنے والے فیصلے کے بعد ماحول خراب کرنے کی کوشش کرنے کے الزام میں پولس نے 8 افراد کو گرفتار کیا ہے۔

پولس ذرائع نے سنیچر کو کہا کہ سول لائن علاقے میں سوشل میڈیا پر متنازعہ پوسٹ ڈالنے کے پاداش میں لکشمن نامی نوجوان کو گرفتار کیا گیا ہے۔اس کے خلاف آئی ٹی ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کیا گیا ہے۔

ضلع کے نوچندی پولس اسٹیشن علاقے میں فیصلے کے بعد پٹاخہ پھوڑنے والے تین نوجوانوں کو گرفتار کیا ہے۔ جبکہ برہم پوری پولیس اسٹیشن علاقے میں مزید ایک شخص کو دفعہ 144 کی خلاف ورزی کرنے کے الزام میں گرفتار کیا گیا ہے۔جبکہ اسی پولیس اسٹیشن علاقے میں امن و امان کو نقصان پہنچانے کے الزام میں 4 نوجوانوں کو حراست میں لیا۔

برہم پوری اسٹیشن علاقے میں پولس نے بھارتیہ ہندو مہاسبھا کے آفس کو بند کیا اور اس کے نائب قومی صدر اشوک شرما کو ان کے گھر میں نظر بند کردیا ہے۔

تاہم ایس ایس پی اجے سہانی نے کہا کہ میرٹھ میں 4 افراد کو دفعہ 144 کی خلاف ورزی کر نے پاداش میں گرفتار کیا گیا ہے جبکہ باقییوں کو حراست میں لینے کے بعد چھوڑ دیا گیا۔ وہیں باغپت میں مخصوص کمیونٹی کے افراد کو گالی دینے اور قابل اعتراض نعرے بازی کرنے کے الزام میں پولس نے ایک شخص کو گرفتار کیا ہے۔

Published: 9 Nov 2019, 6:11 PM