ٹرمپ کشمیر ثالثی معاملہ پر جھوٹ بول رہے ہیں،وزارت خارجہ کا دعوی کبھی نہیں کی بات

دیر رات وزارت خارجہ نے امریکی صدر ٹرمپ کے اس بیان کو خارج کر دیا کہ وزیر اعظم مودی نے کبھی کشمیر معاملہ پر ثالثی کرنے کے لئے کہا تھا

سوشل میڈیا 
سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے بیان کے بعد سیاسی گلیاروں میں ہنگامہ مچا ہوا ہے اور اس بیان کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے وزارت خارجہ نے دیر رات بیان دیا کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ سے کشمیر معاملہ پر کبھی ثالثی کر نے کے لئے نہیں کہا کیونکہ ہندوستان کا ہمیشہ سے موقف ہے کہ یہ معاملہ ہندوستان اور پاکستان کا آپسی معاملہ ہے اس میں تیسرے فریق کی ثالثی قبول نہیں ہے ۔

واضح رہے امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے کل پاکستانی وزیر اعظم عمران خان سے اپنی ملاقات کے دوران کہا تھا کہ وہ کشمیر معاملہ میں ثالثی کے لئے تیار ہیں اور وزیر اعظم نریندر مودی نے بھی ان سے اس معاملہ میں ثالثی کرنے کے لئے کہا تھا ۔اس بیان کے بعد کشمیر کے سابق وزیر اعلی عمر عبد اللہ نے ٹویٹ کر کے سوال کیا تھا کہ یا تو ڈونالڈ ٹرمپ جھوٹے ہیں یا پھر کشمیر کے تعلق سے ہندوستان کی خارجہ پالیسی میں کوئی تبدیلی آئی ہے ۔ اس کے بعد وزارت خارجہ نے بیان دیا کہ ہندوستان کو تیسرے فریق کی ثالثی قبول نہیں ہے ، وزیر اعظم نے کبھی کوئی ثالثی کی بات نہیں کی اور کشمیر معاملہ ہندوستان اور پاکستان کا آپسی مسئلہ ہے۔

وزارت خارجہ کے ترجمان رویش کمار نےٹویٹ کیا ’’ہم نے صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے اس بیان کو دیکھا ہے کہ وہ کشمیر مدے پر ہندوستان اور پاکستان کے ذریعہ درخواست کئے جانے پر ثالثی کے لئے تیار ہیں ۔ وزیر اعظم نریندر مودی کے ذریعہ امریکی صدر سے ایسی کوئی درخواست نہیں کی گئی اور یہ ہندوستان کا موقف ہے کہ پاکستان کے ساتھ سبھی مدوں پر دونوں ممالک کی آپس میں ہی بات ہو گی ۔ پاکستان کے ساتھ بات چیت کے لئے سرحد پار دہشت گردی کو ختم کرنے کی ضرورت ہوگی ۔ شملہ سمجھوتہ اور لاہور اعلانیہ ہندوستان اور پاکستان کو تمام مدوں کو حل کرنے کے لئے آپ سی بات چیت کا پلیٹ فارم فراہم کرتے ہیں ‘‘۔

امریکی صدر ڈونالد ٹرمپ نے عمران خان کے امریکی دورے کے دوران ایک سوال کے جواب میں کہا ہے کہ’’اگر میں مدد کر سکتا ہوں تو میں ثالثی کرنا پسند کروں گا‘‘۔ انہوں نے مزید کہا تھا کہ ہندوستانی وزیر اعظم نریندر مودی نے ان سے دو ہفتہ پہلے جی۔20 کے سربراہی اجلاس میں کشمیر مدے پر ثالثی کرنے کے لئے کہا تھا ۔ٹرمپ نے کہا تھا ’’ میں دو ہفتہ پہلے وزیر اعظم نریندر مودی کے ساتھ تھا اور انہوں نے اس موضوع(کشمیر) کے بارے میں بات کی تھی اور انہوں نے حقیقت میں کہا ’کیا آپ ثالث بننا چاہیں گے؟ میں نے پوچھا ’کہاں‘ (مودی نے کہا ) کشمیر ‘‘۔ٹرمپ کے اس بیان کے بعد سیاسی گلیاروں میں ہنگامہ مچا ہوا ہے ۔