مانجھی نے ماری پلٹی، سارے برہمنوں پر نہیں، پوجا کے نام پر پیسہ وصولنے والوں پر دیا بیان

مانجھی نے کہا تھاکہ جو لوگ آپ کے یہاں پوجا کرانے آتے ہیں ، وہ آپ کے گھر کا کھانا تک نہیں کھاتے اور دکشنا لیکر چلے جاتے ہیں۔

فائل تصویر آئی اے این ایس
فائل تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

بہار کے سابق وزیراعلیٰ جیتن رام مانجھی نے کچھ دن قبل برہمنوں پر دیئے اپنے متنازع بیان سے پوری طرح پلٹی مارتے ہوئے آج کہاکہ ان کا بیان پورے برہمن سماج پر نہیں بلکہ ویسے لوگوں پر تھا ، جو ہنومان چالیسا تک نہیں جانتے ۔

مانجھی نے بتایاکہ گزشتہ 18 دسمبر کو’ اکھل بھارتیہ مسہر۔ بھوئیاں کلیان سنگھ“ کی میٹنگ میں شامل ہوئے تھے ۔ اس دوران بابا صاحب ڈاکٹر بھیم راﺅ امبیڈ کر کی باتوں کو سناتے ہوئے کہاکہ آئین کے معمار نے بھی کہا تھاکہ ہندو مذہب میں بہت ذات ۔ پات اور اونچ نیچ ہے ۔ باباصاحب نے بھی ہندو مذہب چھوڑ کر بودھ مذہب اپنا لیا تھا۔ انہیں باتوں کو بتاتے ہوئے کہا تھاکہ جو لوگ آپ کے یہاں پوجا کرانے آتے ہیں ، وہ آپ کے گھر کا کھانا تک نہیں کھاتے اور دکشنا لیکر چلے جاتے ہیں۔


سابق وزیراعلیٰ نے کہاکہ ہمارے سماج کے لوگ پہلے ستیہ نارائن سوامی کی کتھا نہیں کرواتے تھے لیکن موجودہ وقت میں لوگ ستیہ نارئن سوامی کی کتھا کرواتے ہیں اور اس کتھا کو جولوگ کروانے آتے ہیں ، وہ اتنے ان پڑھ ہوتے ہیں کہ ہمارے سماج کے لوگوں کو گھر کا کھانا اور پانی بھی نہیں پیتے ۔ لیکن دکشنا اور سامان لیکر چلے جاتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ ہم نے پورے برہمن سماج کے اوپر تبصرہ نہیں کیا ہے ۔ بلکہ ویسے لوگوں پر بولا تھا ، جو ہنومان چالیسا تک نہیں جانتے ۔ لیکن پوجا پاٹ کرانے کے نام پر پیسہ وصولنے کیلئے چلے آتے ہیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔