مہاراشٹر: کانگریس کی جانب سے وزیر اعلیٰ ریلیف فنڈ میں 2 کروڑ روپئے کا عطیہ

بالا صاتھورات نے اپنی ایک سال کی جبکہ دیگر کانگریس کے ارکان اسمبلی نے ایک مہینے کی تنخواہ عطیہ کی

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

ممبئی: کورونا کی سنگین صورت حال کی وجہ سے ریاست کو کئی چیلنجوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے، اس کے باوجود ریاست کی مہاراشٹر وکاس اگھاڑی حکومت نے ریاست کے تمام شہریوں کو مفت ویکسین دینے کا اہم فیصلہ کیا ہے۔ بحران کے اس دور میں وزیر محصول بالا صاحب تھورات نے وزیر اعلیٰ ریلیف فنڈ میں 2 کروڑ روپئے کا عطیہ دینے کا اعلان کیا ہے۔

اپنی رہائش گاہ رائل اسٹون میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے بالاصاحب تھورات نے کہا ہے کہ مصیبت کے اس دور میں ایک ذمہ دار سیاسی پارٹی کے ایک نمائندے کی حیثیت سے ریاستی حکومت کے فری ویکسینیشن مہم میں تھوڑی مدد کرتے ہوئے میں نے اپنی ایک سال کی تنخواہ اور کانگریس پارٹی کے تمام ممبرانِ اسمبلی کے ایک ماہ کی تنخواہ، تقریباً 2 کروڑ روپئے وزیر اعلیٰ ریلیف فنڈ میں دینے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس کے علاوہ ریاستی کانگریس کی جانب سے 5 لاکھ روپئے اور امرت مینوفیکچرنگ گروپ سنگمنیر کے تمام ملازمین کے ویکسینشن کا خرچ وزیر اعلیٰ ریلیف فنڈ میں دیا جائے گا۔

تھورات نے کہا کہ کورونا بحران نے ملک اور ریاست میں سنگین صورت حال اختیار کر لی ہے۔ تیز رفتاری کے ساتھ بروقت تمام شہریوں کی ٹیکہ کاری ہی اس وباء کو روکنے کا موثر اقدام ہے۔ کانگریس کی صدر سونیا گاندھی اور رکن پارلیمنٹ راہل گاندھی نے تمام شہریوں کو مفت ویکسینیش کی اپیل کی تھی۔ جب مرکز میں کانگریس کی حکومت تھی تو کئی امراض کی ویکسینیش کی مہم نہایت کامیابی سے چلائی گئی، کیونکہ کانگریس نے اس معاملے میں نفع و نقصان کو مقدم رکھنے کے بجائے عوام کی زندگیوں اور ان کی صحت کو اولین ترجیح دی تھی، جس سے ملک کا ہر شہری واقف ہے۔

انہوں نے کہا کہ مرکز میں بی جے پی کی نریندر مودی حکومت نے کورونا بحران کے دوران اپنی ذمہ داری سے کنارہ کشی اختیار کرتے ہوئے ویکسینیشن کی تمام تر ذمہ داری ریاستی حکومتوں کے اوپر ڈال دی ہے۔ کورونا کے اثرات کو روکنے کے لیے عائد کردہ پابندیوں کی وجہ سے صنعتیں، کاروباروتجارتی ادارے بند ہیں جس کی وجہ سے کئی ریاستیں معاشی مشکلات کا سامنا کررہی ہیں۔ایسی صورت میں ریاستوں کی مدد کرنا تو دور، مرکزی حکومت ریاستوں کے حق کے پیسے بھی نہیں دے رہی ہے۔ایسی سنگین صورت حال میں کانگریس پارٹی کے مطالبے پر مہاراشٹر وکاس اگھاڑی حکومت نے مثبت فیصلہ کرتے ہوئے ریاست کے 18 سال سے زائد عمر کے تمام لوگوں کو مفت ویکسین دینے کا فیصلہ کیا ہے۔ حکومت کے اس فیصلے کا کانگریس پارٹی نے استقبال کیا ہے۔ کورونا کے خلاف اس جدوجہد کو مزید قوت دینے کے لیے ہم نے اپنے طور پر مدد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

تھورات نے مزید کہا کہ ریاستی حکومت کے ذریعہ کیے گئے مفت ویکسینیشن کے فیصلے پر عمل درآمدمیں شریک ہوتے ہوئے میں نے ممبراسمبلی کے طور پر اپنی ایک سال کی تنخواہ اور کانگریس پارٹی کے اسمبلی وقانون ساز کونسل کے 53 ممبران اپنی ایک مہینے کی تنخواہ جو تقریباً 2 کروڑ روپئے ہوتی ہے، نیز مہاراشٹر پردیش کانگریس کمیٹی کی جانب سے 5 لاکھ روپئے وزیر اعلیٰ ریلیف فنڈ میں جمع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس کے علاوہ میں کچھ کوآپریٹو سوسائٹیوں کی رہنمائی کرتا ہوں۔ امرت مینوفیکچرنگ گروپ نامی کوآپریٹو سوسائٹی میں کام کرنے والے ملازمین کے ویکسین کی لاگت کوآپریٹو سوسائٹی برداشت کرے گی اور اس کی لاگت وزیر اعلیٰ امدادی فنڈ کو دی جائے گی۔

تھورات نے کہا کہ کچھ نوجوان بھی اس تعمیری کام میں آگے آرہے ہیں۔ یوتھ کانگریس کے ریاستی صدرستیہ جیت تانمبے نے شہریوں سے اپیل کی ہے کہ جو لوگ ویکسین کی قیمت ادا کرسکتے ہوں، وہ ویکسین کی رقم وزیر اعلی ریلیف فنڈ میں جمع کروائیں۔اسی طرح کابینہ میں میرے ساتھی اور ریاست کے آبی وسائل کے وزیر جینت پاٹل کے بیٹے پرتیک نے اپنے اور دیگر پانچ لوگوں کی ویکسینیشن کا خرچچ وزیر اعلی ریلیف فنڈ میں دینے کا اعلان کیا ہے، میں ان کے اس اقدام کی تعریف کرتا ہوں۔

بالاصاحب تھورات نے کہا کہ کورونا کے مریضوں کے علاج کے لیے آکسیجن، ادویات ودیگر طبی سازوسامان کی ضرورت ہے۔وزیراعلیٰ ریلیف فنڈ میں دی گئی رقم غریب مریضوں کے لیے ضروری ادویات کی خریداری کے لیے استعمال ہوسکتی ہے۔ اس لیے ریاست کی دیگر سیاسی پارٹیوں، کوآپریٹیو سوسائیٹیوں وصنعتی اداروں سے میں اپیل کرتا ہوں کہ وہ اپنے اپنے طریقے سے وزیراعلیٰ ریلیف فنڈ میں رقم جمع کرائیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔