کوڈو پر آپ نے 14 ماہ تک کیا کیا ، مدراس ہائی کورٹ نے مرکزسے پوچھا سوال

جسٹس بنرجی نے کہا کہ اس وبا سے نمٹنے میں کوئی کمی نہیں ہونی چاہئے اور مرکز کو اس پر قابو پانے کے لئے ماہرین کے مشورے سے منصوبہ بند اور موثر انداز میں کام کرنا چاہئے۔

علامتی فائل تصویر آئی اے این ایس
علامتی فائل تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

کل مدراس ہائیکورٹ نے کورونا کی دوسری لہر کے درمیان تمل ناڈو اسمبلی انتخابات کے دوران سیاسی ریلیوں کی ناکامی کے لئے الیکشن کمیشن کو ذمہ دار ٹھہرائے جانے کے بعد اس وبا کو قابو کرنے کے لئے ٹھوس منصوبہ تشکیل دینے میں ناکام رہنے پر مرکز کی سخت سرزنش کی۔

چیف جسٹس سنجیو بینرجی کی سربراہی والی بنچ نے عوامی مفادات کی عرضی کی سماعت کرتے ہوئے حیرت کا اظہار کیا کہ جب کورونا کی دوسری لہر اپنے عروج پر ہے تو مرکزی حکومت گزشتہ 14 ماہ سے کیا کررہی ہے۔


جسٹس بنرجی نے کہا کہ اس وبا سے نمٹنے میں کوئی کمی نہیں ہونی چاہئے اور مرکز کو اس پر قابو پانے کے لئے ماہرین کے مشورے سے منصوبہ بند اور موثر انداز میں کام کرنا چاہئے۔

اس سے قبل ایڈووکیٹ جنرل وجے نارائن نے جسٹس سینتھل کمار رامامورتی کےینچ کو آگاہ کیا تھا کہ ریاستی حکومت نے ووٹوں کی گنتی کے دن 2 مئی کو مکمل لاک ڈاؤن کا منصوبہ بنایا ہے۔ انہوں نے عدالت کو بتایا کہ ریاستی صحت کے سکریٹری اور چیف انتخابی افسر (سی ای او) نے اتوار کو گنتی کے دن کے لئے وسیع تر کووڈ 19 پروٹوکول وضع کیا ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔