چھ ریاستوں کی شہری جھگی آبادی میں رہنے والے نصف ہی ایل پی جی استعمال کرتے ہیں

ہندوستان کی کچی آبادی کی ایک چوتھائی آبادی ان چھ ریاستوں میں رہتی ہے اور ان گھروں میں 16 فیصد لوگ آلودگی پھیلانے والے ایندھن کا استعمال کرتے ہیں۔

علامتی فائل تصویرسوشل میڈیا بشکریہ جسٹ ڈائل
علامتی فائل تصویرسوشل میڈیا بشکریہ جسٹ ڈائل
user

یو این آئی

بہار ، چھتیس گڑھ ، جھارکھنڈ ، مدھیہ پردیش ، راجستھان اور اتر پردیش میں شہری جھگی آبادیوں میں رہنے والے آدھے خاندان ہی ایل پی جی کا استعمال کرتے ہیں۔ توانائی ، ماحولیات اور پانی (سی ای ای ڈبلیو) کونسل کی جانب سے جاری کردہ ایک رپورٹ میں اس کا دعوی کیا گیا ہے۔

اس میں کہا گیا ہے کہ ان شہری کچی آبادیوں کے 86 فیصد گھروں میں ایل پی جی کنکشن ہیں۔ ہندوستان کی کچی آبادی کی ایک چوتھائی آبادی ان چھ ریاستوں میں رہتی ہے۔ اس کے علاوہ ، ایسے گھروں میں 16 فیصد لوگ آلودگی پھیلانے والے ایندھن کا استعمال کرتے ہیں۔ ان میں لکڑی ، گوبر ، زرعی فضلہ ، چارکول اور مٹی کا تیل شامل ہے۔


مٹی کا تیل ان کا بنیادی ایندھن ہے اور ایل پی جی کو چھوڑ کر آلودہ ایندھن ایک تہائی سے زیادہ استعمال کرتے ہیں۔ اس سے گھر کے اندر آلودگی بڑھ جاتی ہے اور گھر میں رہنے والے لوگ اس آلودہ ہوا میں سانس لیتے ہیں۔

یہ نتائج سی ای ای ڈبلیو کے 'کوکنگ فنرجی ایکسیس سروے 2020' پر مبنی ہیں۔ یہ سروے چھ ریاستوں میں شہری کچی آبادیوں میں کیا گیا تھا۔ سروے میں 83 شہری کچی آبادی والے علاقوں میں 656 مکانات کا احاطہ کیا گیا۔ یہ کچی آبادیاں ملک کے 58 مختلف اضلاع میں نوٹیفائد اور غیر نوٹیفائد ہیں -

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔