لیبر ریفارم بل اگلے ہفتے پارلیمنٹ میں پیش ہوگا

گنگوار نے کہا کہ 44 لیبر قوانین کو اجرت، صنعتی تعلقات، سوشل سیکورٹی اور فلاح و بہبود اور پیشہ ورانہ سیفٹی، صحت اور کاروباری حیثیت سے متعلق کوڈ میں شامل کیا جائے گا۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا

یو این آئی

نئی دہلی: لیبر اور روزگار کے وزیر سنتوش کمار گنگوار نے کہا ہے کہ محنت و روزگار کی اصلاحات سے متعلق وسیع بل کو اگلے ہفتے پارلیمنٹ میں لایا جائے گا۔ گنگوار نے بدھ کو راجیہ سبھا میں ضمنی سوالات کے جواب میں کہا کہ حکومت لیبر قوانین کو آسان، جامع اور معقول بنانے کے لئے 44 لیبر قوانین کو چار لیبر کوڈ میں ضم کر رہی ہے۔ ان میں سے دو لیبر کوڈ کو کابینہ نے منظوری دے دی ہے اور ان سے متعلقہ بل اگلے ہفتے پارلیمنٹ میں پیش کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ 44 لیبر قوانین کو اجرت، صنعتی تعلقات، سوشل سیکورٹی اور فلاح و بہبود اور پیشہ ورانہ سیفٹی، صحت اور کاروباری حیثیت سے متعلق کوڈ میں شامل کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے) حکومت نے سال 2002 میں اس تصور پر غور و خوض شروع کیا تھا لیکن دس سالوں میں اس بارے میں کچھ کام نہیں ہوا۔

ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ خواتین ملازمین کے لئے زچگی کی چھٹی 12 سے 26 ہفتے کیے جانے کے بعد انہیں ملازمت پر نہیں رکھے جانے کے سلسلے میں حکومت کو کوئی معلومات یا رپورٹ نہیں ملی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پبلک سیکٹر میں اس کا کوئی اثر نہیں ہے، نجی شعبے میں مسئلہ ہو سکتا ہے لیکن اس کے بارے میں ہمیں اب تک کوئی معلومات یا رپورٹ نہیں ملی ہے۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ملک میں منظم سیکٹرمیں 8 کروڑ اور غیر منظم سیکٹر میں 39 کروڑ ملازمین ہیں۔ حکومت غیر منظم سیکٹر کے ملازمین کی فلاح و بہبود کا پروگرام بنانے کے لئے ان کا ایک قومی ڈیٹا تیار کرا رہی ہے۔ ساتواں اقتصادی سروے بھی شروع کیا گیا ہے اور اس کی رپورٹ آنے پر بھی نئے اعداد و شمار کے بارے میں معلومات حاصل ہوں گی۔