کھٹر حکومت کسانوں کو ہراساں کر رہی ہے

ہریانہ حکومت کی جانب سے فصلوں کی خریداری کے لئے اندراج کرنے کا فیصلہ کسانوں کے لئے گلے کی پھانس بنا ہوا ہے۔

فائل تصویرآئ اے این ایس
فائل تصویرآئ اے این ایس
user

یو این آئی

ہریانہ کانگریس کی صدر کماری شیلجا نے کھٹر حکومت پر فصلوں کی خریداری پر کسانوں کو ہراساں کرنے کا الزام عائد کیا ہے۔

انہوں نے ایک بیان میں کہا ہے کہ فصلوں کی خریداری کے لئے کئے گئے غلط فیصلوں سے کسانوں کی پریشانیوں میں اضافہ ہوا ہے۔ حکومت زمینی حقیقت کو جانے بغیر آمرانہ فیصلے کرکے کسانوں کو برباد کرنے پر تلی ہوئی ہے۔ ریاست میں یکم اپریل سے گندم کی فصل کی خریداری کا کام شروع ہوچکا ہے ، لیکن منڈیوں میں فصل کی خریداری کے مناسب انتظامات نہیں کیے گئے ہیں۔

کماری شیلجا نے کہا کہ کسان بی جے پی مخلوط حکومت کی طرف سے رکھی گئی نئی شرائط سے مایوس اور پریشان ہیں۔ نمی کی معیاری حد 14 فیصد سے کم کرکے 12 فیصد کردی گئی ہے ، جس کی وجہ سے کاشتکار فصلوں کی خریداری کرنے سے قاصر ہیں۔ جن کسانوں کی فصل تیار ہے ، انہیں پیغام نہیں مل رہا ہے۔ ایسے کسانوں کو پیغامات بھیجے جارہے ہیں جن کی فصلیں خریداری کے لئے تیار نہیں ہیں۔ ریاست میں کہیں بھی ، کسانوں کو اگلی صبح آدھی رات کو اپنی فصل منڈی لانے کے لئے پیغامات بھیجے جارہے ہیں ، لہذا کسانوں کو گیٹ پاس نہیں دیا جارہا ہے۔ پوری ریاست میں افراتفری کا ماحول ہے۔

کماری شیلجا نے کہا کہ حکومت کی جانب سے فصلوں کی خریداری کے لئے اندراج کرنے کا فیصلہ کسانوں کے لئے گلے کی پھانس بنا ہوا ہے۔ وہیں اب ، حکومت کی طرف سے رکھی گئی نئی شرائط کے سبب کسان اپنی فصلوں کا اندراج نہیں کروا پائے ہیں۔ ریاست میں ایسے کسانوں کی تعداد تقریباً 40 فیصد ہے ۔ جبکہ گندم کی فصل کی خریداری کا کام شروع ہوچکا ہے۔ کاشتکار جنہوں نے پورٹل پر اپنی 5 ایکڑ فصل کی رجسٹریشن کروائی ہے۔ انہیں صرف ایک ایکڑ کی تصدیق کا ثبوت دیا جارہا ہے۔ ریاست بھر کے کسانوں کے ساتھ بھی یہی کھیل کھیلا جارہا ہے۔ محترمہ شیلجا نے یہ سوال اٹھایا کہ کسان اپنی باقی فصل کو کہاں بیچیں گے۔

کماری شیلجا نے کہا کہ ہریانہ کی بی جےپی - جے جےپی حکومت کسانوں کو پوری طرح سے برباد کرنے پر تلی ہوئی ہے۔ حکومت کسانوں کا استحصال کرنا بند کرے اور اپنے عوام مخالف فیصلوں کو واپس لے۔حکومت کسانوں کی فصل کا ایک ایک دانا خریدنا یقینی بنائے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔