کشمیر: بار ایسوسی ایشن کے سربراہ ایڈوکیٹ میاں عبدالقیوم کو رہا کیے جانے کا مطالبہ

بار ایسوسی ایشن کے 76 سالہ علیل صدر میاں عبدالقیوم گزشتہ برس پانچ اگست سے قید ہیں، انہیں نئی دہلی کی تہاڑ جیل میں رکھا گیا ہے، جہاں ان کی صحت لگاتار مزید بگڑ رہی ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

سری نگر: جموں وکشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن سری نگر نے حکومت سے جموں وکشمیر کے اندر اور باہر کی جیلوں میں بند بار ایسوسی ایشن صدر ایڈوکیٹ میاں عبدالقیوم سمیت تمام قیدیوں کی رہائی کا مطالبہ کیا ہے۔

بار ایسوسی ایشن نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ ’’ہندوستان بھر میں جیلیں گنجائش سے زیادہ بھری ہوئی ہیں جس کے پیش نظر عدالت عالیہ نے جیلوں میں بند مختلف بیماریوں جیسے ذیابیطس، ہائی بلڈ پریشر اور امراض قلب میں مبتلا قیدیوں، جنہیں کورونا وائرس کا شکار ہونے کا زیادہ خطرہ ہے، کی رہائی کے لئے ایک اعلیٰ سطحی کمیٹی تشکیل دینے کی ہدیات جاری کی ہیں۔‘‘

بیان میں کہا گیا ہے کہ بار ایسوسی ایشن کے صدر ایڈوکیٹ میاں عبدالقیوم، جو تہاڑ جیل میں بند ہیں، عمر رسیدگی کی دہلیز پر ہونے کے علاوہ مختلف موذی بیماریوں جیسے ذیابیطس، ہائی بلڈ پریشر، گردے کی تکلیف اور دل کے امراض میں مبتلا ہیں جس کے باعث انہیں اس وائرس سے متاثر ہونے کے زیادہ امکانات ہیں۔

بار کے ارکان کا کہنا ہے کہ موجودہ حالات میں جب دنیا اس وائرس کا مقابلہ کرنے کے لئے سماجی دوری اختیار کر کے متحد ہو رہی ہے ایسے حالات میں قیدیوں کی مستقل یا عارضی رہائی ایک دانشمندانہ اقدام ہوگا تاکہ یہ لوگ بھی اس وائرس کے اثرات سے محفوظ رہ سکیں۔

واضح رہے کہ بار ایسوسی ایشن کے 76 سالہ علیل صدر میاں عبدالقیوم گزشتہ برس پانچ اگست سے قید ہیں، انہیں نئی دہلی کی تہاڑ جیل میں رکھا گیا ہے، جہاں ان کی صحت لگاتار مزید بگڑ رہی ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔