خستہ حال معیشت کو پٹری پر لانے کے بجائے سی اے اے میں الجھی رہی حکومت: کنہیا کمار

کنہیا کنہیا نے کہا کہ یہ لڑائی کسی کو بڑا بنانے کے لیے نہیں ہے بلکہ ہندوستانی ترنگا لہرانے کی لڑائی ہے۔ مرکزی حکومت ملک پر زبردستی این آر سی مسلط کرنا چاہتی ہے، جو انھیں الٹا پڑگیا ہے

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

بھاگلپور: ہندوستان کی کمیونسٹ پارٹی (سی پی آئی) کے لیڈر اور جواہر لعل نہرو یونیورسٹی (جے این یو) طلبا یونین کے سابق صدر کنہیا کمار نے آج کہا کہ ملک کی خستہ حال معیشت کو پٹری پرلانے کے بجائے مرکزی حکومت شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) جیسے مسائل میں لوگوں کو الجھا کر آپس میں لڑا رہی ہے۔

کنہیا کمار نے بھاگلپور ضلع کے جگدیش پور علاقہ کے پورینی بازار میں آئین بچاؤ، ملک بچاؤ کمیٹی کے زیرانتظام ایک عوامی جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کہا، ’’ملک کی خستہ حال معیشت کو بہتر بنانے کے بجائے حکومت شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) جیسے معاملوں میں لوگوں کو الجھا کرآپس میں لڑا رہی ہے لیکن ہم اس سے ڈرنے والے نہیں ہیں اور آخری وقت تک لڑتے رہیں گے۔‘‘

سی پی آئی لیڈر نے کہا کہ یہ سی اے اے، شہریوں کے قومی رجسٹر (این آرسی) اور آبادی سے متعلق قومی رجسٹر (این پی آر) کی لڑائی نہیں ہے بلکہ ہندوستانی جمہوریت اور آئین بچانے کی لڑائی ہے۔ انھوں نے کہا کہ سی اے اے ملک کے لوگوں کے دل میں سوراخ کرنے کے لیے لایا گیا ہے۔ اس حکومت کی قیادت کر رہی بی جے پی مذہب کے نام پر ملک کو کو بانٹنے میں لگی ہے۔

کنہیا کمار نے مودی حکومت کو نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ یہ وہی لوگ ہیں جو دروازے کو بوسہ لے کر پارلیمنٹ میں داخل ہوئے تھے لیکن یہی لوگ اب آئین کی روح کو تارتار کردیں گے، اس کا اندازہ نہیں تھا۔انھوں نے کہا کہ ملک کے عوام ان کے غلط منصوبہ کو سمجھ چکے ہیں۔

سی پی آئی لیڈر نے کہا کہ سی اے اے، این آرسی اور این پی آر کے ذریعہ ملک کو دوبارہ توڑنے کی سازش چل رہی ہے۔ آج صرف آسام میں این آرسی کرنے سے کل 19 لاکھ لوگوں کے نام کٹ گئے ہیں، جن میں 15لاکھ ہندو اور چار لاکھ مسلمان ہیں اور اسے نافذ کرنے کے کام میں حکومت کے 1600 کروڑ روپئے خرچ ہوئے ہیں۔ کنہیا کمار نے کہا کہ ایسے میں اگر پورے ملک میں این آرسی نافذ کی گئی تو سات ہزار کروڑ رپئے سے زیادہ خرچ ہوں گے۔ یعنی پورے ملک سے تقریباً 15کروڑ لوگوں کی شہریت چھن جائے گی۔

کنہیا کنہیا نے کہا کہ یہ لڑائی کسی کو بڑا بنانے کے لیے نہیں ہے بلکہ ہندوستانی ترنگا لہرانے کی لڑائی ہے۔ مرکزی حکومت ملک پر زبردستی این آر سی مسلط کرنا چاہتی ہے، جو انھیں الٹا پڑگیا ہے۔ ملک کےلوگ اپنا ایمان کبھی نہیں بیچیں گے اور نہ ہی کسی کی شہریت چھیننے دیں گے۔

کنہیا کمار نے کہاکہ آئین اور روزگار مخالف بھارتیہ جنتاپارٹی کی حکومت کے خلاف آج فیصلہ کن لڑائی لڑنے کی ضرورت آن پڑی ہے نہیں تو گاندھی اور امبیڈکر جیسے رہنماؤں کے خوابوں کا ملک برباد ہوجائیگا ۔انھوں نے کہاکہ اس کے لیے سبھی کومتحد ہوکر لڑائی لڑنی ہوگی۔

جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کانگریس کے رکن اسمبلی شکیل احمد خان نے کہاکہ ملک کوبانٹنے میں لگی مرکزی حکومت کے خلاف جاری تحریک سے حکومت کی بے چینی بڑھ گئی ہے ۔جلسہ سے آل انڈیا کانگریس کمیٹی کے رکن پروین سنگھ کشواہا ،راشٹریہ جنتادل (آرجے ڈی) کی رہنما رابعہ خاتون نے بھی خطاب کیا۔

next