عوامی کرفیو: ریلوے نے 4000 سے زیادہ ٹرینیں اور کیٹرنگ بند کرنے کا لیا فیصلہ

22 مارچ کو عوامی کرفیو کے پیش نظر ریلوے بورڈ نے 4 ہزار سے زیادہ ٹرینیں بند کرنے کا فیصلہ لیا ہے۔ 21 مارچ کو رات 12 بجے سے 22 مارچ کی رات 10 بجے تک کوئی بھی ٹرین ابتدائی اسٹیشن سے روانہ نہیں ہوگی۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

نئی دہلی:کورونا وائرس کی عالمی وبا سے بچنے کے لئے ریلوے نے تاریخ میں پہلی مرتبہ غیر معمولی اقدام کرتے ہوئے اتوار 22 مارچ کو چار ہزار سے زیادہ ٹرینیں نہیں چلانے کا اعلان کیا ہے جن میں میل ایکسپریس، سپرفاسٹ، پسنجر گاڑیوں کے علاوہ لوکل ٹرینیں بھی شامل ہیں۔

ریلوے بورڈ کے ذریعہ جاری ایک ریلیز میں بتایا گیا ہےکہ یہ قدم وزیراعظم نریندر مودی کے ذریعہ عوامی کرفیو کی اپیل کے پیش نظر اٹھایا گیا ہے۔ ریلوے بورڈ نے یہ بھی واضح کیا ہے کہ دہلی، ممبئی، چنئی، کچھ بڑے شہروں میں لوکل ٹرینیں کم تعداد میں چلائی جائیں گی، پوری طرح بند نہیں کی جائیں گی۔ لیکن کون کون سی ٹرینیں رد ہوں گی یہ زونل ریلوے مقامی صورت حال اور ضرورت کی بنیاد پر طے کرے گی۔


ریلوے بورڈ کے ریلیز میں بتایا ہے کہ 21 مارچ کو رات بارہ بجے سے 22 مارچ کی رات 10 بجے تک یعنی 22 گھنٹے تک کوئی بھی ٹرین اس کی ابتدائی اسٹیشن سے روانہ نہیں کی جائے گی۔ حالانکہ جو ٹرینیں شام 7 بجے تک سفر کے لئے روانہ ہوچکی ہوں گی انہیں نہیں روکا جائے گا۔ ریلوے کے اس فیصلے سے 2400 پسنجر، 1300 میل/ایکسپریس ٹرینیں متاثر ہوں گی۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔