کسانوں کو دوبارہ دہلی آنے میں دیر نہیں لگے گی: کانگریس

وزیر اعظم اور وزیر زراعت کے بیانات ایک دوسرے سے متضاد ہیں۔ جو لوگ اپنی فطرت میں کسانوں کو دھوکہ دیتے رہے ہیں، ایک بار پھر ان کا فریب کھل کر سامنے آ رہا ہے۔

فائل تصویر آئی اے این ایس
فائل تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

کانگریس نے کہا ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی اور وزیر زراعت نریندر سنگھ تومر کے زرعی قوانین کے بارے میں بیانات متضاد ہیں اور یہ واضح ہے کہ یہ حکومت کسانوں کے ساتھ سازش کر رہی ہے لیکن اسے سمجھ لینا چاہیے کہ کسانوں کو دوبارہ دہلی آنے میں دیر نہیں لگے گی۔

کانگریس نے کہا ہے کہ ایک طرف مسٹر مودی زرعی قوانین کے لیے کسانوں سے معافی مانگتے ہیں اور دوسری طرف وزیر زراعت کسانوں کے مفاد میں زرعی قوانین کی وضاحت کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ حکومت تینوں زرعی قوانین کو واپس لینے پر غور کر سکتی ہے۔


پارٹی نے کہا “وزیر اعظم اور وزیر زراعت کے بیانات ایک دوسرے سے متضاد ہیں۔ جو لوگ اپنی فطرت میں کسانوں کو دھوکہ دیتے رہے ہیں، ایک بار پھر ان کا فریب کھل کر سامنے آ رہا ہے۔ خیر عوام ان لوگوں کی خبر لینے کو تیار ہے۔ وزیر زراعت کے بیان سے کالے زرعی قوانین کے تعلق سے مودی حکومت کی سازش سامنے آگئی ہے۔ ان لوگوں پر کیسے بھروسہ کیا جائے جن کی فطرت فریب ہے۔

کانگریس نے کہا کہ کسانوں کے خلاف بی جے پی کی ذہنیت ایک بار پھر بے نقاب ہوگئی ہے۔ وزیر زراعت کا یہ کہنا کہ ہم زرعی قوانین پر پھر سے آگے بڑھیں گے یقینا کسانوں کے ساتھ دھوکہ ہے۔ اس بیان سے مودی حکومت کی غرور اور کسان مخالف ذہنیت کھل کر سامنے آ گئی ہے، لیکن کسان ان کی حقیقت کو اچھی طرح سمجھ رہے ہیں اور انہیں دوبارہ دہلی آنے میں زیادہ دیر نہیں لگے گی۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔