سفارتی عملے نے جان خطرے میں ڈال کر چار ہزار لوگوں کو سوڈان سے نکالا

وزیر خارجہ نے کہا کہ  آپریشن کاویری ایک 'پیچیدہ آپریشن' تھا اور وزارت خارجہ اس کے بارے میں عوامی طور پر بات کرنے سے ہچکچا رہی تھی۔

<div class="paragraphs"><p>فائل تصویر آئی اے این ایس</p></div>

فائل تصویر آئی اے این ایس

user

یو این آئی

ہندوستان کی طرف سے 2014 سے شروع کی گئی تمام بچاؤ کارروائیوں میں، 'آپریشن کاویری' سب سے خطرناک اور پیچیدہ تھا کیونکہ تشدد سے متاثرہ سوڈان کے دارالحکومت خرطوم میں ہندوستانی سفارت خانے کے عملے نے تقریباً 4000 لوگوں کو بچانے کے لیے اپنی جان خطرے میں ڈال دی تھی۔

حکومت کی خارجہ پالیسی پر بات کرتے ہوئے وزیر خارجہ ایس جے شنکر نے کہا کہ آپریشن کاویری ایک 'پیچیدہ آپریشن' تھا اور وزارت خارجہ اس کے بارے میں عوامی طور پر بات کرنے سے ہچکچا رہی تھی کیونکہ وہ 'واقعی فکر مند تھے کہ اگر ہم نے کچھ پبلک کیا تو ہم انہیں خطرے میں ڈال رہے ہوں گے'۔”


وزیر خارجہ نے کہا، "آپریشن کاویری کے تحت حکومت تقریباً 4000 لوگوں کو واپس لائی ہیں اور ان میں سے تقریباً 11-12 فیصد کرناٹک کے باشندے ہیں۔ یہ فضائیہ کا استعمال کرتے ہوئے کیا گیا، 17 پروازیں کی گئیں اور پانچ سمندری جہازوں نے بھی لوگوں کی جانیں بچائیں۔

جے شنکر نے کہا، "2015 سے ان آپریشنز کی ایک سیریز کو دیکھتے ہوئے جب ہم نے یمن آپریشن، آپریشن راحت چلایا، لیکن حقیقت میں یہ سب سے خطرناک آپریشن تھا۔ یہ ایک ایسا آپریشن تھا جس میں لوگوں نے اپنی جانیں خطرے میں ڈالی تھیں، جہاں خرطوم میں کچھ سفارت خانے تھے، جب لڑائی شروع ہوئی تو زیادہ تر سفارت خانے بہت تیزی سے چلے گئے۔ ہمارا سفارت خانہ اس لیے روکا گیا کیونکہ خرطوم میں ہندوستانی تھے۔ وزیر خارجہ نے کہا کہ تمام ہندوستانیوں کے جانے کے باوجود خرطوم میں سفارت خانہ جاری رہا "کیونکہ یہ سفیر اور ان کی ٹیم کی ذمہ داری تھی"۔


جئے شنکر نے کہا کہ خرطوم سے 40 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع وادی سیڈنا فوجی ہوائی اڈے سے ہندوستانی فضائیہ کے ایک طیارے کے ذریعے ہندوستانی سفارتخانے کے اہل خانہ سمیت 121 افراد کو ایک جرأت مندانہ ریسکیو میں ہندوستان لایا گیا۔ ان کا کہنا تھا کہ اس وقت حالات اتنے خراب تھے کہ وہاں کی فضائی پٹی باقاعدگی سے کام نہیں کر رہی تھی۔ وہاں پہنچنے والے پہلے پائلٹ کو ماردیا گیا تھا۔
آپریشن کاویری کے دوران درپیش چیلنجوں کی تفصیل سے بتاتے ہوئے انہوں نے کہا کہ سفارت خانے کی ٹیم کو بسیں کرایہ پر لینا تھیں، بلیک مارکیٹ سے پیٹرول لانا پڑا کیونکہ ایندھن کا آنا مشکل تھا اور چیک پوائنٹس پر بات چیت کرنی تھی۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ سوڈان میں لڑائی شروع ہوئی تو وہ بیرون ملک سفر کر رہے تھے اور افریقہ میں تھے۔ وزیر اعظم نریندر مودی نے ان سے رابطہ کیا تھا اور اس بات کی تصدیق کرنا چاہتے تھے کہ آیا انخلاء کے عمل کے لیے تمام نظام موجود ہیں یا نہیں۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;