ہند اور چین کے مابین پانچویں دور کی فوجی بات چیت

مشرقی لداخ میں ایل اے سی کے ساتھ ساتھ ہندوستان اور چین کے مابین بڑھتی کشیدگی کے درمیان دونوں ملکوں کی افواج آج چین کی طرف واقع مولڈو میں کور کمانڈروں کی سطح پر پانچویں دور کی بات چیت ہو رہی ہے

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

نئی دہلی: مشرقی لداخ میں حقیقی کنٹرول لائن (ایل اے سی) کے ساتھ ساتھ ہندوستان اور چین کے مابین بڑھتی کشیدگی کے درمیان دونوں ملکوں کی افواج آج چین کی طرف واقع مولڈو میں کور کمانڈروں کی سطح پر پانچویں دور کی بات چیت ہو رہی ہے۔

ہندستانی فوج کے ذرائع نے اتوار کے روز بتایا کہ ملاقات 11: 00 بجے شروع ہوگی۔ پچھلی بات چیت 14 جولائی کو ہوئی تھی۔ ذرائع نے بتایا کہ اس اجلاس کا ایجنڈا مشرقی لداخ میں ایل اے سی کے قریب کے علاقوں اور گوگرا سے مکمل طور پر فوجی انخلا کے لئے دباؤ ڈالنا ہوگا۔

30 جولائی کو ، ہندوستان نے کہا تھا کہ مشرقی لداخ میں پس روی کا عمل ابھی مکمل نہیں ہوا ہے۔ تاہم ، چین نے دعوی کیا ہے کہ یہ عمل مکمل ہوگیا ہے۔ وزارت خارجہ برائے امور (ایم ای اے) کے ترجمان انوراگ سریواستو نے ورچول ہفتہ وار پریس بریفنگ کے دوران کہا تھا کہ اس مقصد کے سلسلے میں کچھ پیشرفت ہوئی ہے لیکن پس روی کا عمل ابھی بھی تکمیل طلب ہے۔

سریواستو نے یہ بھی بتایا تھا کہ ہندستان کو امید ہے کہ چین معمول کی بحالی کیلئے قومی سلامتی کے مشیر اجیت ڈووال اور چینی وزیر خارجہ وانگ یی کے مابین بات ہونے والی چیت کے مطابق عمل پیرا ہو گا۔

مئی کے شروع سے ہی ہندستان اور چین کے مابین سرحدی تعطل کا سلسلہ جاری ہے۔ اس کے نتیجے میں 15 جون کو وادی گلوان میں بھی دونوں ملکوں کی افواج کے مابین پرتشدد جھڑپیں ہوئی تھیں ، جس میں ہندوستانی فوج کے 20 اہلکار ہلاک ہوگئے تھے۔ چینی فریق کو بھی جانی نقصان کا سامنا کرنا پڑا لیکن چین نے ابھی تک کوئی اعدادوشمارنہیں بتائے۔

    Published: 2 Aug 2020, 11:21 AM
    next